Peerzada Writes

Peerzada Writes SHIFA ONLINE :::: Spiritual Healing and Consultancy | شِفاء آن لائن :::: رُوحانی ? Who is Peerzada Miyan Sahab?
(6)

Introduction

The idea behind “Shifa Online” had emerged in the mind of “Peerzada Miyan Sahab” in early 2000 when he came across that many fake gurus and peers ripping off people in different ways to get some fame and money. He started working on this project in late 2000 and gave it the shape of reality in mid of 2001. The basic motive of starting “Shifa Online” is that people of different race a

nd religions from all over the world become able to get free spiritual healing and consultancy and become aware “Spiritual & Self Development” with the help of modern technology and the global distribution of the Internet. Now at “Shifa Online” hundreds of people get spiritual healing and cure of BLACK MAGIC (KALA JADU, SIFLI), EVIL EYE (NAZAR-E-BAD), DEMON’S EFFECTS (ASAIB), ASTRAL BODY ATTACKS (HAMZAAD), MENTAL & PHYSICAL DISEASE every month through the different alternative methods of “Peerzada Miyan Sahab” like Recitation (wazaifs), Talisman (Taweezaat) and other methodologies to the people of different race and religion. Peerzada Miyan Sahab, is a Muslim Sufi of Pakistan. He is a Sufi Master, author, educator, and spiritual guide for millions of people throughout the world. Birth and childhood

He was born in 1982 in Karachi city, in the Sindh province of Pakistan. He belongs to a famous Sufi family of Karachi city and Hyderabad city, in the Sindh province of Pakistan. Spiritual Path

The first spiritual blessings were showered on Miyan Sahab by a SUFI of India, whose name was Baba Jalaal Shah, the grandson of the famous SUFI Sheikh of India, Bawa Abdur Rahman Shah of Ambheta Shareef, may Allah illuminate, his shrine. Miyan Sahab was 4 years old when he was taken to his holy presence, (Baba Jalaal Shah), for the cure of seizures. Later, Miyan Sahab was trained and raised in the Sufi path by his father ,Hazrat Khaleel Ur Rahman Shah(may his shrine be shining always) who was the son and the first Sajjadah Nasheen and the successor of Hazrat Kassim Shah Faridi also known as Kassim Baba Faridi by his disciples. Miyan Sahab Rahmania Faridi is the only son of his noble father. His father always wanted to see Miyan Sahab as a leader of spiritual pathways of the highest stages, so he received full supervision and training, and was perfected in the Sufi path, receiving the blessings and spiritual gaze of the Masters of this sublime tariqa. Upon acquiring all the highest stages of the SUFI tradition, Miyan Sahab was finally awarded with the khilafah and Sajjadgi succession by his Master and father, Hazrat KHALEEL UR REHMAN SHAH, at the age of eight. His father fully authorized him in the Chishtiya, Naqshbandia, Soharwardiya and Qadriya tariqa, by awarding him Ijazah and designated Miyan Sahab as his successor at different occasions. Miyan Sahab also happened to meet many unknown SUFI MYSTICS throughout his life journey upto now, who at different phases of life gave him the lessons to love GOD and have unconditional faith in Him and illuminate his heart with the love of GOD. Rahmania Faridi Spiritual Hub

Miyan Sahab also founded the RAHMANIA FARIDI SPIRITUAL HUB, (as per his father’s aspiration in early 2005), after the death of his father, may his shrine be shining always for propagating the SUFI teachings to illuminate the hearts with the love of GOD and unconditional faith in Him. Miyan Sahab’s disciples and people who love him and respect him are found worldwide – The majority are found in India, Pakistan, North America and South Africa. He is a magnificent man with a heart full of unconditional love and a charismatic personality. His lessons and teachings illuminate the hearts with love of GOD and unconditional faith in Him, in consequence enlightening of the inner being.

07/03/2023

لیلۃ البراءۃ کی خصوصی دُعا میں شرکت کے لئے 5 مرتبہ درود ابراہیمی پڑھ کر اپنا نام کمنٹ کردیں۔ پوسٹ شیئر کرنا نا بھولیں

06/03/2023

انرجی ہیلنگ لینے والے حضرات رابطہ فرمالیں

06/03/2023

روحانی استخارہ کروانے والے اپنے مسائل کا حل حاصل کریں. آپ اپنا نام, والدہ کا نام اور اپنی تاریخ پیدائش واٹس ایپ یا پیج میسج سے میسج کریں اور اور ساتھ میں اپنا مسئلہ تفصیل سے بیان کریں۔

05/03/2023

روحانی استخارہ کروائیں اپنے مسائل کا حل اسم باری تعالیٰ سے حاصل کریں. آپ اپنا نام, والدہ کا نام اور اپنی تاریخ پیدائش واٹس ایپ یا پیج میسج سے میسج کریں اور اور ساتھ میں اپنا مسئلہ تفصیل سے بیان کریں

05/03/2023

ناف بِٹھوانے والے حضرات میسج کرلیں

04/03/2023

Receive wahdah healing energy for the next 1 hour message to start.

04/03/2023

بہت سے شادی شدہ جوڑے اولاد کی نعمت سے محروم ہیں۔اللہ پاک ان کو نیک اور صالح اولاد عطا فرمائے.
آمین

04/03/2023

برائے مہربانی میسج بھیج کر 72 گھنٹے انتظار فرمایا کریں ایک میسج بار بار مت کیا کریں آپ کے میسج کا جواب ضرور دیاجائے گا

03/03/2023

ناف بِٹھوانے والے حضرات شام 7 سے نو بجے کے درمیان اپنے نام کے ساتھ رابطہ فرمالیں

03/03/2023

تمام جسمانی و روحانی بیماریوں کے لئے وحدہ ہیلنگ لینے والے حضرات رابطہ فرمالیں

28/02/2023

اپنے مسائل کے حوالے سے استخارہ کے لئے اگلے ایک گھنٹے تک واٹس ایپ یا ڈی ایم کر سکتے ہیں

28/02/2023

Healing session on for next 1 hour WhatsApp or DM

22/01/2023

‏اور یہ کہ وہی ہے جو ہنساتا اور رُلاتا ہے، اور یہ کہ وہی ہے جو موت بھی دیتا ہے، اور زندگی بھی،
سورۃ النجم

22/01/2023

‏انہی باغوں میں وہ نیچی نگاہ والیاں ہوں گی جنہیں ان جنتیوں سے پہلے نہ کسی انسان نے کبھی چھوا ہوگا، اور نہ کسی جن نے! اب بتاؤ کہ تم دونوں اپنے پروردگار کی کون کونسی نعمتوں کو جھٹلاؤگے؟ وہ ایسی ہوں گی جیسے یاقوت اور مرجان!
سورۃ الرحمٰن

22/01/2023

‏اور تم نے جو کچھ مانگا، اُس نے اُس میں سے (جو تمہارے لئے مناسب تھا) تمہیں دیا۔ اور اگر تم اللہ کی نعمتوں کو شمار کرنے لگو تو شمار (بھی) نہیں کرسکتے۔ حقیقت یہ ہے کہ انسان بہت بے انصاف، بڑا ناشکرا ہے۔
سورۃ ابراھیم آیت نمبر 34

22/01/2023

السلامُ علیکم
صبح بخیر زندگی

اے اللہ اے ہمارے واحد سہارے, اے مشکلوں کو آسان کرنے والے, اے اپنے بندوں کے ساتھ درگزر اور رحم کا معاملہ کرنے والے رب۔ ہم روز تیری سرکار میں بے شرموں کی طرح اپنی جھولیاں اُٹھائیں چلے آتے ہیں کیونکہ میرے اللہ ہم جائیں تو جائیں کہاں اور کس کی جانب کہ ہم تیری عبادت کرتے ہیں اور تجھی سے مدد مانگتے ہیں اور تیری ہی جانب ہم نے لوٹ کے جانا ہے۔

تو اے میرے اللہ ہماری مشکلوں کو آسانیوں میں تبدیل فرمادے, ہمارے دکھوں کو خوشیوں میں بدل دے, ہماری بیماروں کو شفاء عطافرمادے, ہماری بے روزگاری کو برکتوں کے ساتھ بہترین خزانوں سے دور فرمادے۔ مالک ہمارے ٹوٹے دلوں کو جوڑ دے اور ہمیں ہمت اور حوصلہ عطاہو, آزمائشوں پر صبر کی توفیق ہو, باطل کے سامنے کھڑے ہونے کی قوت عطا ہو, حق گوئی کے لئے بے باکی سے نواز۔

مولیٰ ہمیں حاسدین, ساحرین, بد خواہ, بد نظر, منافقین, شیاطین, حشرات, درندوں, موزی جانوروں اور تمام ظاہرہ اور باطنی فتنوں کے شر سے محفوظ فرما۔ مولیٰ ہم گنہگاروں پر اپنا خاص کرم بنائے رکھ, ہمیں کبھی اپنی رحمتوں کے سائے سے مرحوم نہ کر, ہمارے ساتھ درگزر کا معاملہ فرما, ہمارے کبیرہ سغیرہ گناہوں کو معاف فرمادے۔ ہمیں والدین کی خدمت اور اولاد کے ساتھ شفقت کی توفیق عطا ہو۔ ہمیں صلہ رحمی کی توفیق عطاہو, ہمیں جوڑنے والوں میں رکھ نہ کے توڑنے والوں میں۔

مولیٰ ہماری گنہگار آنکھوں کو بروز اجل تیرے محبوب رسول اللہ ﷺ کا دیدار عطاہو اور بروز قیامت آپ ﷺ کی شفاعت نصیب فرما آمین۔

#پیرزادہ

19/01/2023

‏اور اپنے رَبّ کا صبح و شام ذکر کیا کرو، اپنے دِل میں بھی، عاجزی اور خوف کے (جذبات کے) ساتھ، اور زبان سے بھی، آواز بہت بلند کئے بغیر! اور اُن لوگوں میں شامل نہ ہو جانا جو غفلت میں پڑے ہوئے ہیں
سورۃ الاعراف آیت نمبر 205

19/01/2023

‏اور جو شخص کوئی بُرا کام کر گذرے یا اپنی جان پر ظلم کر بیٹھے، پھر اللہ سے معافی مانگ لے تو وہ اللہ کو بہت بخشنے والا، بڑا مہربان پائے گا
سورۃ النساء آیت نمبر 110

19/01/2023

السلامُ علیکم
صبح بخیر زندگی

یااللہ یارحمن یارحیم یا رب العالمین ہم آج ایک بار پھر تیرے دربار میں اپنی جھولی پھیلائے چلے آئیں ہیں۔ ہمارا کوئی عمل اس قابل نہیں کہ ہم تیرے دربار میں کچھ سوال کرسکیں مگر پھر بھی تیری رحمت کے بھروسے اللہ ہم بے عملے, بے علمے, گنہگار اور خطاکار مگر تیرے بندے تجھ سے سوال کرتے ہیں, تجھ سے اپنی مرادیں مانگتے ہیں, اپنے کار زندگی میں تیری رہنمائی کے خواہاں ہیں کہ جائیں تو جائیں کہاں اور کس در کو جائیں کہ تمام آسمانوں, زمینوں اور جہانوں میں کسی کی حکمرانی ہے تو تیرے سوا کون۔ ائے میرے رب اگر تو ہی ہم گنہگاروں کو ہنکار دے گا تو کون ہے, کون ہے تمام عالموں میں جو ہم کو پناہ دے سکے, کون ہے جو ہماری داد رسی کرسکے۔ میرے مولیٰ ہم صرف تیری رحمت کے بھروسہ اپنی گندی جھولی روز روز پھیلا کر تیرے آگے منہ اُٹھائے بے شرموں کی طرح چلے آتے ہیں کہ تو فرماتا ہے تیری رحمت تیرے غضب پر سبقت لے گئی۔ تو اے اللہ ہمیں بھی اپنی رحمت کے سائے میں رکھ اور غضب سے محفوظ فرما۔ ہم برے ہیں, گندے ہیں, گنہگار ہیں, خطاکار ہیں اور اپنی تمام کمیوں پر نادم اور شرمسار ہیں۔ اک تیری رحمت کا سہارا ہے یا رب ورنہ ہم جیسے بندے تو بالکل بے کار ہیں۔ ہمیں اپنی رحمت سے مایوس نہ کرنا ہماری التجائیں اور دعائیں قبول کرنا, ہماری خطاؤں کو نظرانداز کہنا درگزر کرنا کہ تو رحمٰن ہے میرے مولیٰ اور تیری شان کے خلاف کے کہ تو اپنے در سے کسی کو بھی خالی ہاتھ لوٹائے ۔

ای کریمی کہ اَز خزانہ غیب گبر و ترسا وظیفہ خور داری دوستاں را کجا کنی محروم تو کہ با دشمناں نظر داری

آمین یا رب العالمین یا رحمٰن یا رحیم

18/01/2023

‏اور تمہارے پروردگار نے یہ حکم دیا ہے کہ اس کے سوا کسی کی عبادت نہ کرو، اور والدین کے ساتھ اچھا سلوک کرو۔ اگر والدین میں سے کوئی ایک یا دونوں تمہارے پاس بڑھاپے کو پہنچ جائیں تو انہیں اف تک نہ کہو، اور نہ انہیں جھڑکو۔ بلکہ ان سے عزت کے ساتھ بات کیا کرو۔
سورۃ الاسراء آیت نمبر 23

18/01/2023

‏اللہ ہی کا ہے جو کچھ آسمانوں اور زمین میں ہے، بیشک اللہ ہی ہے جو سب سے بے نیاز ہے، بذاتِ خود قابلِ تعریف۔
سورۃ لقمان آیت نمبر 26

18/01/2023

السلامُ علیکم
صبح بخیر زندگی

اے اللہ اے میرے واحد سہارے میں نے خود کو ہمیشہ تیری رضا پر راضی کیا, تیری آزمائشوں کو اپنی خوش بختی جان کر اپنے سینے پر تمغوں کی طرح سجایا, مالک میں نافرمان نہیں مگر کبھی کبھی تھک جاتا ہوں, ٹوٹنے لگتا ہوں ان آزمائشوں اور تکلیفوں کے بوجھ سے۔ میں جانتا ہوں کہ زندگی کے ہر ہر مقام پر تونے ہی میری لاج رکھی اور تونے ہی مجھے تھام رکھا ورنہ میری کیا طاقت کہ ایسے اعصاب شکن طوفانوں سے نکل سکتا۔ میرے مالک میں آج بھی کمزور پڑھ رہا ہوں, مجھے سوالوں کے جوابات نہیں مل رہے, مالک مجھ پر فضل فرما, کرم فرما۔ اے قوی مجھے طاقت سے نواز, اے کشتی نوح کو طوفان میں سلامتی دینے والے میری کشتی کا ملاح بھی تو, میری کشتی بھی تیری اور میں بھی تیرا پھر چاہے تو ڈبو دے چاہے تو طوفان سے ساحل تک پہنچادے۔ مجھ کو تیری تدبیر پر غیر مشروط بھروسہ ہے مالک میں خود کو تیرے حوالے کرچکا میرے قلب کو طاقت عطافرما اور مجھے حوصلہ دے کہ میں اپنے تمام کاموں کو سرانجام دے سکوں آمین۔

زاہد ظاہر پرست از حال ما آگاہ نیست

17/01/2023

‏اور تمہارے پروردگار نے کہا ہے کہ مجھے پکارو، میں تمہاری دُعائیں قبول کروں گا، بیشک جو لوگ تکبر کی بنا پر میری عبادت سے منہ موڑتے ہیں، وہ ذلیل ہو کر جہنم میں داخل ہوں گے۔
سورۃ غافر آیت نمبر 60

17/01/2023

‏اور (اے پیغمبر!) ہم نے تمہیں سارے جہانوں کے لئے رحمت ہی رحمت بنا کر بھیجا ہے۔
سورۃ الانبیاء آیت نمبر 107

17/01/2023

#پیرزادہ
السلامُ علیکم
صبح بخیر زندگی

اے اللہ, اے پاک پروردگار, اے سیاہ رات سے دن کو نکالنے والے رب, ہم تیری بندگی کرتے ہیں اور تیری ہی جانب رجوع کرتے ہیں۔

تو اے میرے اللہ مجھ پر میرا کار آسان فرمادے, جو تکلیف مجھ پر ہے یہ تیری جانب سے آزمائش ہے تو مجھے مضبوط بنادے اور اس میں سرخرو فرما اور اگر یہ تکلیف میرے اعمال کا نتیجہ ہے تو مجھے معاف فرمادے اور درگزر کا معاملہ فرما۔ مالک اگر تو ہی اپنے بندے کو ہنکار دےگا تو کون ہے تمام جہانوں میں جو اُسے پناہ دے سکے. اور جیسا تو فرماتا ہے کہ تیری رحمت تیرے غضب پر غالب ہے تو میرے مالک تجھے تیری رحمت کے وصیلہ سے پکارتا ہوں, مجھ پر, میرے ماں باپ پر, اولاد پر, بہن بھائیوں پر, دوست احباب پر, رشتہ داروں پر رحم فرما اور ہمارے ساتھ درگزر کا معاملہ فرما۔ ہم میں سے جو لوگ وصال فرما گئے ہیں اُن کی مغفرت فرما اور اُن کے لئے بہترین معاملات فرمادے۔ جو بے اولاد ہیں اُن کو اپنی رحمت اور نعمت سے مالامال فرمادے, اولاد کو والدین کا فرمانبردار بنادے اور والدین کے دلوں میں اولاد کی شفقت بڑھادے۔ جو بیمار ہیں اُن کو شفاء کاملہ عاجلہ عطاہو, جو بے روزگار ہیں اُن کو اپنے بہترین خزانوں سے رزق عطافرمادے۔ شادی شدہ جوڑوں کے درمیان محبت, خلوص, اتفاق اور جذبہ ایثار پیدا فرمادے۔

ہمارے قلوب کو تیرے محبوب ﷺ کی محبت سے منور فرمادے کہ بے شک و شبہ آپ ﷺ

یَا صَاحِبَ الجَمَالِ وَ یَاسَیِّدََالبَشَرْ
مِنْ وَجْہِکَ الْمُنِیْرِ لَقَدْ نُوِّرَ الْقَمَرْ
لَا یُمْکِنُ الثَّنَائُ کَمَا کَانَ حَقَّہ
بعد از خدا بزرگ توئی قصہ مختصر
اے صاحب جمال کل اے سرورِ بشر
رْوئے منیر سے ترے روشن ہوا قمر
ممکن نہیں کہ تیری ثنا کا ہو حق اَدا

تو اے میرے مالک ہمیں بروز قیامت آپ ﷺ کی شفاعت نصیب ہو اور قبر میں دیدار مصطفٰی ﷺ نصیب ہو آمین یا رب العالمین ۔

#پیرزادہ

17/01/2023

*“ڈاکٹر برق نے ۱۹۱۸ میں اپنے باپ سے وہ سوال کیا جو آج کے دور میں بھی شاید ہی کسی بیٹے نے کیا ہو”*

_*ایک دلچسپ اور نکتہ خیز تحریر*_
:
ڈاکٹر غلام ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺑﺮﻕ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﮐﺎ ﻋﻈﯿﻢ ﺩﻣﺎﻍ ﺗﮭﮯ ‘ ﯾﮧ 1901 ﺀ ﻣﯿﮟ بسال س ﺍﭨﮏ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ ‘ ﻭﺍﻟﺪ ﮔﺎﺅﮞ ﮐﯽ ﻣﺴﺠﺪ ﮐﮯ ﺍﻣﺎﻡ ﺗﮭﮯ ‘ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ‘ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻓﺎﺿﻞ ﮨﻮﺋﮯ ‘ ﻣﻨﺸﯽ ﻓﺎﺿﻞ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺩﯾﺐ ﻓﺎﺿﻞ ﮨﻮﺋﮯ ‘ ﻣﯿﭩﺮﮎ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﭩﺮﮎ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺗﻌﻠﯿﻤﺎﺕ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯿﮟ۔
ﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﻟﮉ ﻣﯿﮉﻝ ﻟﯿﺎ ‘ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﻢ ﺍﮮ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ 1940 ﻣﯿﮟ ﭘﯽ ﺍﯾﭻ ﮈﯼ ﮐﯽ ‘ ﺍﻣﺎﻡ ﺍﺑﻦ ﺗﯿﻤﯿﮧ ﭘﺮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﯿﺴﺲ ﻟﮑﮭﺎ ‘ ﺍﻣﺎﻣﺖ ﺳﮯ ﻋﻤﻠﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯽ ‘ ﭘﮭﺮ ﮐﺎﻟﺞ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﻭﻓﯿﺴﺮ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ‘ ﺍٓﭖ ﮐﮯ ﺗﮭﯿﺴﺲ ﮐﻮ ﺍٓﮐﺴﻔﻮﺭﮈ ﺍﻭﺭ ﮨﺎﺭﻭﺭﮈ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﻧﮯ ﻗﺒﻮﻟﯿﺖ ﺑﺨﺸﯽ ‘ ﺍﺳﻼﻡ ﭘﺮ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯽ ‘ 1949 ﺀ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺗﺸﮑﯿﻞ ﺳﮯ ﺩﻭ ﺳﺎﻝ ﺑﻌﺪ *’’ ﺩﻭ ﺍﺳﻼﻡ ‘‘* ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﻌﺮﮐۃ ﺍﻵﺭﺍﺀ ﮐﺘﺎﺏ ﻟﮑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﻮ ﮨﻼ ﮐﺮ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ۔ ﯾﮧ ﮐﺘﺎﺏ ‘ ﮐﺘﺎﺏ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﺍﻧﻘﻼﺏ ﺗﮭﺎ۔
*’’ﺩﻭ ﺍﺳﻼﻡ ‘‘* ﮐﮯ ﺑﻌﺪ *’’دو ﻗﺮﺁﻥ ‘‘* ﺍﻭﺭ ’’ ﻣﻦ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ ‘‘ ﻟﮑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﭘﯿﺎﺳﮯ ﺫﮨﻨﻮﮞ ﮐﻮ ﺳﯿﺮﺍﺏ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ‘

ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻏﻼﻡ ﺟﯿﻼﻧﯽ ﺑﺮﻕ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﺑﺎﻟﻎ ﺗﮭﺎ ﺁﭖ ﯾﮧ ﺟﺎﻧﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ’’ ﺩﻭ ﺍﺳﻼﻡ ‘‘ ﮐﺎ ﺻﺮﻑ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯿﮧ ﻣﻼﺣﻈﮧ ﮐﯿﺠﯿﮯ

"......ﯾﮧ 1918 ﺀ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ ﮨﮯ ‘ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻣﺮﺗﺴﺮ ﮔﯿﺎ ‘ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺳﮯ ﮔﺎﻭٔﮞ ﮐﺎ ﺭﮨﻨﮯ ﻭﺍﻻ ، ﺟﮩﺎﮞ ﻧﮧ ﺑﻠﻨﺪ ﻋﻤﺎﺭﺍﺕ، ﻧﮧ ﻣﺼﻔﺎ ﺳﮍﮐﯿﮟ، ﻧﮧ ﮐﺎﺭﯾﮟ، ﻧﮧ ﺑﺠﻠﯽ ﮐﮯ ﻗﻤﻘﻤﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﺍﺱ ﻭﺿﻊ ﮐﯽ ﺩﮐﺎﻧﯿﮟ ‘ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺩﻧﮓ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ‘ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺳﮯ ﺳﺠﯽ ﺩﮐﺎﻧﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﺭﮈ ﭘﺮ ...
ﮐﮩﯿﮟ ﺭﺍﻡ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﺳﻨﺖ ﺭﺍﻡ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ ‘
ﮐﮩﯿﮟ ﺩْﻧﯽ ﭼﻨﺪ ﺍﮔﺮﻭﺍﻝ ‘
ﮐﮩﯿﮟ ﺳﻨﺖ ﺳﻨﮕﮫ ﺳﺒﻞ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﯿﮟ ﺷﺎﺩﯼ ﻻﻝ ﻓﻘﯿﺮ ﭼﻨﺪ۔

ﮨﺎﻝ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺳﺮﮮ ﺗﮏ ﮐﺴﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﮐﺎﻥ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺍٓﺋﯽ ‘
ﮨﺎﮞ .......
ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺿﺮﻭﺭ ﻧﻈﺮ ﺍٓﺋﮯ ‘
ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻮﺟھ ﺍﭨﮭﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﮔﺪﮬﮯ ﻻﺩ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ‘
ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺴﯽ ﭨﺎﻝ ﭘﮧ ﻟﮑﮍﯾﺎﮞ ﭼﯿﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ
ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯿﮏ ﻣﺎﻧﮓ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ‘
.... ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﮐﺎﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﻓﭩﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﮌﮬﺎﺋﯽ ﻣﻦ ﺑﻮﺟھ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺩﺑﺎ ﮨﻮﺍ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﻗﺪﻡ ﺍﭨﮭﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔

ﮨﻨﺪﻭﻭٔﮞ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﺭﻭﻧﻖ ‘ ﺑﺸﺎﺷﺖ ﺍﻭﺭ ﭼﻤﮏ ﺗﮭﯽ

ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﭼﮩﺮﮦ ﻓﺎﻗﮧ ‘ ﻣﺸﻘﺖ ‘ ﻓﮑﺮ ﺍﻭﺭ ﺟﮭﺮﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻓﺴﺮﺩﮦ ﻭ ﻣﺴﺦ ۔

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ,....ﮐﯿﺎ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﺴﺮ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ : ﮨﺎﮞ !
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮨﻨﺪﻭ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺩﻭ ﮨﺎﺗھ، ﺩﻭ ﭘﺎﻭٔﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺳﺮ ﻋﻄﺎ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮐﯿﺎ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮨﻨﺪﻭ ﺗﻮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﻣﺰﮮ ﻟﻮﭦ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺣﯿﻮﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﺪﺗﺮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﺴﺮ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔
*ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ : ﯾﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﺠﺲ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﺘﻼﺷﯽ ﮐﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﺎﭘﺎﮎ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﯾﮧ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﮨﻨﺪﻭﻭٔﮞ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺖ ﮨﻤﯿﮟ ﺩﮮ ﺩﯼ ﮨﮯ ‘ ﮐﮩﻮ ﮐﻮﻥ ﻓﺎﺋﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎ ؟*
ﮨﻢ ﯾﺎ ﻭﮦ؟ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻻ ’’ ﺍﮔﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﺍٓﭖ ﺗﺠﺎﺭﺕ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻝ ﺗﺠﺎﺭﺕ ﺧﺮﯾﺪﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻣﺮﺗﺴﺮ ﺗﮏ ﮐﯿﻮﮞ ﺍٓﺋﮯ ؟
*ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺳﺎﺯ ﻭ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺧﺮﯾﺪ ﮐﺮ ﻣﻨﺎﻓﻊ ﮐﻤﺎﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺍﺳﮯ ﻣﺮﺩﺍﺭ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﻨﺎ ، ﻋﺠﯿﺐ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﻣﻨﻄﻖ ﮨﮯ ‘‘*
ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ : ﺑﯿﭩﺎ ! ﺑﺰﺭﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﺤﺚ ﮐﺮﻧﺎ ﺳﻌﺎﺩﺕ ﻣﻨﺪﯼ ﻧﮩﯿﮟ ‘ ﺟﻮ ﮐﭽھ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﺎ ﺗﺮﺟﻤﮧ ﮨﮯ۔
ﺣﺪﯾﺚ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻣﯿﮟ ﮈﺭ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺤﺚ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ ﺩﯼ ‘ ﺳﻔﺮ ﺳﮯ ﻭﺍﭘﺲ ﺍٓ ﮐﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮔﺎﻭٔﮞ ﮐﮯ ﻣْﻼ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﺒﮩﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ۔
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﻭﮨﯽ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ‘
ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻣﻌﻤﮯ ﮐﻮ ﺣﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﮍﭖ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﺮﮮ ﻗﻠﺐ ﻭ ﻧﻈﺮ ﭘﮧ ﺗﻘﻠﯿﺪ ﮐﮯ ﭘﮩﺮﮮ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﻋﻠﻢ ﮐﻢ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻓﮩﻢ ﻣﺤﺪﻭﺩ۔ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺍﻟﺠﮭﺘﺎ ﮔﯿﺎ ‘ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﭼﻮﺩﮦ ﺑﺮﺱ ﺗﮏ ﺣﺼﻮﻝ ﻋﻠﻢ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﻭ ﺻﻮﻓﯿﺎﺀ ﮐﮯ ﮨﺎﮞ ﺭﮨﺎ ‘ ﺩﺭﺱ ﻧﻈﺎﻣﯽ ﮐﯽ ﺗﮑﻤﯿﻞ ﮐﯽ ‘ ﺳﯿﮑﮍﻭﮞ ﻭﺍﻋﻈﯿﻦ ﮐﮯ ﻭﺍﻋﻆ ﺳﻨﮯ ‘ ﺑﯿﺴﯿﻮﮞ ﺩﯾﻨﯽ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﭘﮍﮬﯿﮟ
ﺍﻭﺭ......ﺑﺎﻻٓﺧﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ
ﺍﺳﻼﻡ ﺭﺍﺋﺞ ﮐﺎ ﻣﺎ ﺣﺎﺻﻞ ﯾﮧ ﮨﮯ۔
ﺗﻮﺣﯿﺪ ﮐﺎ ﺍﻗﺮﺍﺭ ﺍﻭﺭ ﺻﻠﻮٰۃ ‘
ﺯﮐﻮٰۃ ، ﺻﻮﻡ ﺍﻭﺭ ﺣﺞ ﮐﯽ ﺑﺠﺎ ﺍٓﻭﺭﯼ ‘
ﺍﺫﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺩﺏ ﺳﮯ ﮐﻠﻤﮧ ﺷﺮﯾﻒ ﭘﮍﮬﻨﺎ ‘
ﺟﻤﻌﺮﺍﺕ ‘ ﭼﮩﻠﻢ اور ﮔﯿﺎﺭﮨﻮﯾﮟ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﻮ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﻗﺮﺍٓﻥ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺭﺕ ﭘﮍﮬﻨﺎ ‘
ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺫﮐﺮ ﮐﻮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﻋﻤﻞ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ‘
ﻗﺮﺍٓﻥ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﻭﺩ ﮐﮯ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﺍﻧﺎ ‘ ﺣﻖ ﮨﻮ ﮐﮯ ﻭﺭﺩ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﻣﺮﺷﺪ ﮐﯽ ﺑﯿﻌﺖ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﻣﺮﺍﺩﯾﮟ ﻣﺎﻧﮕﻨﺎ ‘
ﻣﺰﺍﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺳﺠﺪﮮ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﺗﻌﻮﯾﺬﻭﮞ ﮐﻮ ﻣﺸﮑﻞ ﮐﺸﺎ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﯾﺎ ،ﻣﺼﯿﺒﺖ ﺳﮯ ﻧﺠﺎﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺟﯽ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﮔﻨﺎﮦ ﺑﺨﺸﻮﺍﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻗﻮﺍﻟﯽ ﺳﻨﻨﺎ ‘
ﻏﯿﺮ ﻣﺴﻠﻢ ﮐﻮ ﻧﺎﭘﺎﮎ ﻭ ﻧﺠﺲ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ‘
ﻃﺒﯿﻌﯿﺎﺕ ،ﺭﯾﺎﺿﯿﺎﺕ، ﺍﻗﺘﺼﺎﺩﯾﺎﺕ ، ﺗﻌﻤﯿﺮﺍﺕ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﻮ ﮐﻔﺮ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﻏﻮﺭ ﻭ ﻓﮑﺮ ﺍﻭﺭ ﺍﺟﺘﮩﺎﺩ ﻭ ﺍﺳﺘﻨﺒﺎﻁ ﮐﻮ ﮔﻨﺎﮦ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﻨﺎ
ﺻﺮﻑ ﮐﻠﻤﮧ ﭘﮍﮪ ﮐﺮ ﺑﮩﺸﺖ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﻧﺎ
ﺍﻭﺭ، ﮨﺮ ﻣﺸﮑﻞ ﮐﺎ ﻋﻼﺝ ﻋﻤﻞ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺩﻋﺎﻭٔﮞ ﺳﮯ ﮐﺮﻧﺎ ۔
ﻣﯿﮟ ﻋﻠﻤﺎﺋﮯ ﮐﺮﺍﻡ ﮐﮯ ﻓﯿﺾ ﺳﮯ ﺟﺐ ﺗﻌﻠﯿﻤﺎﺕ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﭘﺮ ﭘﻮﺭﯼ ﻃﺮﺡ ﺣﺎﻭﯼ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮﺋﯽ۔۔۔۔
ﺧﺪﺍ ﮨﻤﺎﺭﺍ ‘
ﺭﺳﻮﻝ ﮨﻤﺎﺭﺍ ‘
ﻓﺮﺷﺘﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ‘
ﺟﻨﺖ ﮨﻤﺎﺭﯼ ‘
ﺣﻮﺭﯾﮟ ﮨﻤﺎﺭﯼ ‘
ﺯﻣﯿﻦ ﮨﻤﺎﺭﯼ ‘
ﺍٓﺳﻤﺎﻥ ﮨﻤﺎﺭﺍ ۔۔۔
ﺍﻟﻐﺮﺽ ﺳﺐ ﮐﭽھ ﮐﮯ ﻣﺎﻟﮏ ﮨﻢ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﻗﻮﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺟﮭﮏ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﺍٓﺋﯽ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻥ ﮐﯽ ﺩﻭﻟﺖ ‘ ، ﻋﯿﺶ ﺍﻭﺭ ﺗﻨﻌﻢ ﻣﺤﺾ ﭼﻨﺪ ﺭﻭﺯﮦ ﮨﮯ۔
ﻭﮦ ﺑﮩﺖ ﺟﻠﺪ ﺟﮩﻨﻢ ﮐﮯ ﭘﺴﺖ ﺗﺮﯾﻦ ﻃﺒﻘﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﻧﺪﮬﮯ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﯾﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ

ﺍﻭﺭ

ﮨﻢ ﮐﻤﺨﻮﺍﺏ ﻭ ﺯﺭﺑﻔﺖ ﮐﮯ ﺳﻮﭦ ﭘﮩﻦ ﮐﺮ ﺳﺮﻣﺪﯼ ﺑﮩﺎﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺣﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗھ ﻣﺰﮮ ﻟﻮﭨﯿﮟ ﮔﮯ۔

’’ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﮔﺰﺭﺗﺎ ﮔﯿﺎ ‘ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﭘﮍﮬﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻋﻠﻮﻡ ﺟﺪﯾﺪﮦ ﮐﺎ ﻣﻄﺎﻟﻌﮧ ﮐﯿﺎ ‘ ﻗﻠﺐ ﻭ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﻭﺳﻌﺖ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ‘ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﻭ ﻣﻠﻞ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﭘﮍﮬﯽ ﺗﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺍ۔۔۔۔

*ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ 128 ﺳﻠﻄﻨﺘﯿﮟ ﻣﭧ ﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ ‘*

ﺣﯿﺮﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺍﻟﻠﮧ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺍﻭﺭ ﺻﺮﻑ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺧﻼﻓﺖ ﻋﺒﺎﺳﯿﮧ ﮐﺎ ﻭﺍﺭﺙ ﮨﻼﮐﻮ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﺎﻓﺮ ﮐﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﻨﺎﯾﺎ؟

ﮨﺴﭙﺎﻧﯿﮧ ﮐﮯ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺗﺨﺖ ﭘﮧ ﻓﺮﻭﻧﯿﺎﮞ ﮐﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﭩﮭﺎﯾﺎ؟

ﻣﻐﻠﯿﮧ ﮐﺎ ﺗﺎﺝ ﺍﻟﺰﺑﺘھ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﮐھ ﺩﯾﺎ؟

ﺑﻠﻐﺎﺭﯾﮧ ‘ ﮨﻨﮕﺮﯼ ‘ ﺭﻭﻣﺎﻧﯿﮧ ‘ ﺳﺮﻭﯾﺎ ‘ ﭘﻮﻟﯿﻨﮉ ‘ ﮐﺮﯾﻤﯿﺎ ‘ ﯾﻮﮐﺮﺍﺋﯿﻦ ‘ ﯾﻮﻧﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺑﻠﻐﺮﺍﺩ ﺳﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍٓﺛﺎﺭ ﮐﯿﻮﮞ ﻣﭩﺎ ﺩﯾﮯ؟

ﮨﻤﯿﮟ ﻓﺮﺍﻧﺲ ﺳﮯ ﺑﯿﮏ ﺑﯿﻨﯽ ﺩﻭ ﮔﻮﺵ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮑﺎﻻ

ﺍﻭﺭ ﺗﯿﻮﻧﺲ، ﻣﺮﺍﮐﻮ ‘ ﺍﻟﺠﺰﺍﺋﺮ ﺍﻭﺭ ﻟﯿﺒﯿﺎ ﺳﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﺧﺼﺖ ﮐﯿﺎ؟

ﻣﯿﮟ ﺭﻓﻊ ﺣﯿﺮﺕ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮔﯿﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ۔

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﭘﺮ ﭘﺎﻧﭻ ﺳﺎﺕ ﺑﺮﺱ ﺗﮏ ﻏﻮﺭ ﻭ ﻓﮑﺮ ﮐﯿﺎ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺴﯽ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﭘﺮ ﻧﮧ ﭘﮩﻨﭻ ﺳﮑﺎ

ﺎﯾﮏ ﺩﻥ میں ﺳﺤﺮ ﮐﻮ ﺑﯿﺪﺍﺭ ﮨﻮﺍ ‘ ﻃﺎﻕ ﻣﯿﮟ ﻗﺮﺍٓﻥ ﺷﺮﯾﻒ ﺭﮐﮭﺎ ﺗﮭﺎ ‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ، ﮐﮭﻮﻻ ﺍﻭﺭ ﭘﮩﻠﯽ ﺍٓﯾﺖ ﺟﻮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍٓﺋﯽ ﻭﮦ ﯾﮧ ﺗﮭﯽ ‘ ۔۔۔۔‏( ﺗﺮﺟﻤﮧ ‏)
*ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻢ ﺍﻥ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﮐﻮ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﺮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ ‘ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻭﮦ ﺷﺎﻥ ﻭ ﺷﻮﮐﺖ ﻋﻄﺎ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻧﺼﯿﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﮨﻢ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﮭﯿﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﭼﮭﻤﺎ ﭼﮭﻢ ﺑﺎﺭﺷﯿﮟ ﺑﺮﺳﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﺎﻏﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺷﻔﺎﻑ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﯽ ﻧﮩﺮﯾﮟ ﺑﮩﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺐ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺭﺍﮨﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﮟ ﺗﻮ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ ﻭﺍﺭﺙ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ ‘‘ ۔*

ﻣﯿﺮﯼ ﺍٓﻧﮑﮭﯿﮟ ﮐﮭﻞ ﮔﺌﯿﮟ ‘ ﺍﻧﺪﮬﯽ ﺗﻘﻠﯿﺪ ﮐﯽ ﻭﮦ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﮔﮭﭩﺎﺋﯿﮟ ﺟﻮ ﺩﻣﺎﻏﯽ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﭘﺮ ﻣﺤﯿﻂ ﺗﮭﯿﮟ ﯾﮏ ﺑﯿﮏ ﭼﮭﭩﻨﮯ ﻟﮕﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﺟﺎﺭﯾﮧ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﮔﻮﺷﮯ ﺑﮯ ﺣﺠﺎﺏ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﮯ۔

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻗﺮﺍٓﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﺑﺠﺎ ﯾﮧ ﻟﮑﮭﺎ ﺩﯾﮑﮭﺎ ۔۔۔۔۔
*’’ﯾﮧ ﺩﻧﯿﺎ ﺩﺍﺭﺍﻟﻌﻤﻞ ﮨﮯ ‘*
*ﯾﮩﺎﮞ ﺻﺮﻑ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﺑﯿﮍﮮ ﭘﺎﺭ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ‘*
ﮨﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﯽ ﺟﺰﺍ ﻭ ﺳﺰﺍ ﻣﻘﺮﺭ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻋﺎ ﭨﺎﻝ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﺩﻭﺍ ‘‘
*۔" ﻟﯿﺲ ﻟﻼﻧﺴﺎﻥ ﺍﻻ ﻣﺎﺳﻌﯽ" ۔*
*ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻭﮨﯽ ﮐﭽھ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﮦ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ*
‏( ﺍﻟﻘﺮﺍٓﻥ ‏) ۔

ﻣﯿﮟ ﺳﺎﺭﺍ ﻗﺮﺍٓﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﭘﮍﮪ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﺤﺾ۔۔۔۔

ﺩﻋﺎ ﯾﺎ ﺗﻌﻮﯾﺬ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺻﻠﮧ ﻧﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ ‘

ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺯﺑﺎﻧﯽ ﺧﻮﺷﺎﻣﺪ ﮐﺎ ﺍﺟﺮ ﺯﻣﺮﺩﯾﮟ، ﻣﺤﻼﺕ ‘ ﺣﻮﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺣﺠﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﭘﺎﯾﺎ ‘

ﯾﮩﺎﮞ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺻﺮﻑ ﺗﻠﻮﺍﺭ ﮐﯽ ﺟﮭﻨﮑﺎﺭ ﺳﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﺍٓﻧﮑﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﻏﺎﺯﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﻭﮦ ﺟﮭﺮﻣﭧ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺟﻮ ﺷﮩﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻻﺯﻭﺍﻝ ﺩﻭﻟﺖ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﺑﮭﮍﮐﺘﮯ ﺷﻌﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺩ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔

ﻭﮦ ﺩﯾﻮﺍﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺟﻮ ﻋﺰﻡ ﻭ ﮨﻤﺖ ﮐﺎ ﻋﻠﻢ ﮨﺎﺗھ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮯ ﻣﻌﺎﻧﯽ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﺎﺍﻧﺪﺍﺯ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﺑﮍﮪ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﭘﺮﻭﺍﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﺟﻤﺎﻝِ ﺟﺎﮞ ﺍﻓﺮﻭﺯ ﭘﮧ ﺭﮦ ﺭﮦ ﮐﮯ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮨﻮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔

ﻗﺮﺁﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﻟﻌﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﻣﺤﺾ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺫﻟﯿﻞ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻗﺮﺍٓﻥ ﮐﮯ ﻋﻤﻞ، ﻣﺤﻨﺖ ﺍﻭﺭ ﮨﯿﺒﺖ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﻮ ﺗﺮﮎ ﮐﺮ ﺭﮐﮭﺎ ﮨﮯ۔

ﻭﮦ ﺍﻭﺭﺍﺩ ﻭ ﺍﻭﻋﯿﮧ ﮐﮯ ﻧﺸﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﺖ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺗﻤﺎﻡ ﺳﺮﻣﺎﯾﮧ ﭼﻨﺪ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭼﻨﺪ ﺗﻌﻮﯾﺬ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﺲ۔ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺗھ ﮨﯽ
ﯾﻘﯿﻦ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻡ ﺩﻭ ﮨﯿﮟ ‘

*📚 ﺍﯾﮏ ﻗﺮﺍٓﻥ ﮐﺎ ﺍﺳﻼﻡ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﻼ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ*
ﺍﻭﺭ
ﺩﻭﺳﺮﺍ ﻭﮦ ﺍﺳﻼﻡ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺗﺒﻠﯿﻎ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﺳّﯽ ﻻﮐﮫ ﻣْﻼ ﻗﻠﻢ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﯿﭙﮭﮍﻭﮞ کا ﺳﺎﺭا ﺯﻭﺭ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ....!

منقول

16/01/2023

اور وہی ہے جس نے تمہارے لئے رات کو لباس بنایا، اور نیند کو سراپا سکون، اور دن کو دوبارہ اُٹھ کھڑے ہونے کا ذریعہ بنادیا۔

﴿سورۃ الفرقان، ۴۷﴾

16/01/2023

‏صلی اللہ علیہ والہ وسلم

" درود شریف کے بے انتہا فضائل ہیں ، ان فضائل میں سے دو فضائل یہ ہیں کہ درود شریف کا پڑھنے والا دنیا کی رسوائی سے محفوظ رہتا ہے ، اور اس کی آبرو میں کوئی کمی نہیں آتی "

حضرت شاہ ولی اللّٰه محدث دہلویؒ
[ القول الجمیل ص 103 ]

Address

Karachi
11432

Telephone

+923242711217

Website

Alerts

Be the first to know and let us send you an email when Peerzada Writes posts news and promotions. Your email address will not be used for any other purpose, and you can unsubscribe at any time.

Share


Other Karachi clinics

Show All

You may also like