مردانہ جنسی مسائل اور علاج

مردانہ جنسی مسائل اور علاج serving the patients with compassionate care

15/09/2023
ہر ماں کے بریسٹ ایک خاص قسم کی مہک رکھتے ہیں۔ اور نومولود بچے اپنی ماں کی اس مہک کو دودھ پئے بغیر محسوس کر سکتے ہیں۔ ایک...
08/07/2023

ہر ماں کے بریسٹ ایک خاص قسم کی مہک رکھتے ہیں۔ اور نومولود بچے اپنی ماں کی اس مہک کو دودھ پئے بغیر محسوس کر سکتے ہیں۔

ایک بچے کے اولفکٹری فنکشن یا پھر خوشبو محسوس کرنے والے دماغی حصے بہت ایکٹو ہوتے ہیں۔ اور چونکہ ماں کا دودھ ایک مخصوص مہک رکھتا ہے اس لئے ایک بچہ اس کو پئے بغیر بھی پہچان سکتا ہے

اور اگر،

ابتدائی دس دن اگر ماں کا ہی دودھ ملے تو وہ اس سے اٹیچ ہو جاتا ہے اور ان دنوں میں اپنی ماں کے جسم کے ہر حصے جس سے یہ ٹچ ہوتا ہے اس کی مہک کو اپنے دماغ میں محفوظ کر لیتا ہے اور اس مہک کو اپنے لئے راحت سمجھنے لگ جاتا ہے۔

یہی وہ وجہ ہے کہ ایک بچہ اپنی ماں سے ہٹ کر کسی دوسری عورت کا دودھ نہیں پتا۔ یا کسی اور کا پینا شروع کردے تو وہ نہیں چھوڑتا۔

وہیں پر،

کچھ عورتوں کی مہک ایک جیسی بھی ہو سکتی ہے سو وہ ان کا دودھ پی سکتا ہے۔

اگر ایک بچہ بوتل سے فارمولا یا دوسرا دودھ پیتا ہے تو وہ ماں کی اس مہک کو کبھی بھی نہیں پہچان پاتا ہے اور ماں کی مہک کو نہیں جان پاتا اسی وجہ سے وہ کسی اور عورت اور ماں کی مہک ایک ہی سمجھتا ہے۔

اس کے علاوہ سٹڈی سے یہ بھی ثابت ہوا ہے کہ اگر ماں کا لباس کوئی اور پہن لے تو بچہ اس کے پاس جا کر بھی خود بخود راحت محسوس کرکے چپ ہو جاتا ہے۔ وہیں پر بچہ باپ کی کسی قسم کی بھی مہک کو نہیں محسوس کر پاتا ہے۔

سو ابتدائی دنوں میں اپنے بچے کو جی بھر کے اٹھائیں تاکہ یہ آپ کیساتھ مانوس ہو سکے۔

07/07/2023

تقریباََ %40 لوگوں کا کہنا ہے کہ ذیابیطس کی تشخیص کے بعد انہیں نفسیاتی مسائل کا سامنا کرنا پڑا۔
ذیابیطس میں ڈپریشن بہت سے عوامل کے ساتھ منسوب ہے جیسے
اس بیماری کے نفسیاتی اور سماجی اثرات
جینسیاتی کمزوری.. مردانہ کمزوری
ذیابیطس سے دماغ کا متاثر ہونا

ذیابیطس اور ڈپریشن دونوں معیارِ زندگی پر واضح اثرات مرتب کرتے ہیں۔
ان اثرات کے منفی پہلو سے خود کو بچانے کے لئے آپ کی ثابت قدمی اور مستقل مزاجی سب سے زیادہ اہمیت رکھتی ہے۔
صحیح خوارک اور ادویات کے اوقات کی پابندی, روزانہ واک اور ورزش سے نہ صرف شوگر کنٹرول ہو سکتی ہے بلکہ ڈپریشن پر بھی قابو پایا جا سکتا ہے۔

ماہرِ ذیابیطس اور میڈیکل سپیشلسٹ ڈاکٹر اسرار سے آنلائن کنسلٹیشن کے لئے کمینٹس میں لکھیں
Yes
یا دئیے گئے نمبر پر رابطہ کریں
03171798286
ٹیم آپ کو تفصیلات فراہم کر دے گی۔

03/07/2023

سوال: کیا بچے کی پیدائش کے بعد ہوا یا ٹھنڈ لگنے سے کچھ سال بعد ہڈیوں میں درد ہو جاتا ہے ؟

جواب :
آسٹیوپوروسس یعنی ہڈیوں کا بھربھرا ہونا وہ عمل ہے جو عمر بڑھنے کے ساتھ سب کو ہوتا ۔ مردوں کے مقابلے میں خواتین کو آسٹیوپوروسس ہونے کا زیادہ خطرہ ہوتا ہے کیونکہ خواتین میں عمر کے ساتھ آنے والی ہارمون کی تبدیلیاں، ہڈیوں کی کثافت کو متاثر کرتی ہیں۔
خواتین میں ہارمون ایسٹروجن صحت مند ہڈیوں کے لیے ضروری ہے۔ 45 سے پچاس سال کی عمر کے بعد ایسٹروجن کی سطح گر جاتی ہے جو ہڈیوں کی کثافت میں تیزی سے کمی کا باعث بن سکتا ہے۔

خواتین کو آسٹیوپوروسس ہونے کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے اگر
- 45 سال کی عمر سے پہلے ماہواری ختم ہونا
- 45 سال کی عمر سے پہلے ہسٹریکٹمی (رحم کو نکال دینا) خاص طور پر جب بیضہ دانی کو بھی ہٹا دیا جاتا ہے۔
زیادہ ورزش یا بہت زیادہ غذائی پرہیز کے نتیجے میں 6 ماہ سے زائد عرصے تک ماہواری نہ آنا ۔

ہڈیوں کی کمزوری اور درد کی وجہ ہارمونز کی تبدیلی ، وٹامن ڈی اور کیلشیم کی کمی، بچوں کی پیدائش کے بعد صحت مند غذا اور وزن برقرار نہ رکھنا ہوتی ہیں۔

اس طرح سے نام پنکھے کی ہوا اور اے-سی کا لگ جاتا ہے۔ یہ ہے وہ سائنس جس کی وجہ سے بزرگوں کی باتیں سچ لگتی ہیں۔

#ایڈمن

03/07/2023

سوال: بچے کی پیدائش کے بعد کتنے دن تک نہیں نہا سکتے ؟

جواب: ہمارے ہاں ایک رواج ہے کہ بچے کی پیدائش کے بعد چالیس دن تک نومولد بچے کی ماں کو نہانے سے منع کر دیا جاتا ہےہیں۔ ان میں "بزرگوں" کی اور بڑی بوڑھیوں، دادی، نانی، ساس وغیرہ کی بتائی ہوئی بہت سی وجوہات بتائی جاتی ۔ ان میں سر فہرست ہیں:

- ہوا لگ جائے گی(چاہے جون جولائی کی گرمی ہو)
- جسم میں یا ہڈیوں میں درد ہو گا۔
- ابھی جسم کچا ہے ، نہانے سے کمزوری ہو جائے گی۔
- خون زیادہ بہے گا ، بند یا بے ترتیب ہو جائے گا

کیا یہ سب وجوہات سچ ہیں؟

نہیں، یہ سب سوچنا اور کہنا توہم پرستی اور لاعلمی ہے ۔ نہانا اور اپنے آپ کو اور بچے کو صاف رکھنا بہت ضروری ہے اور اس کا کوئی نقصان نہیں۔

نارمل ڈلیوری اور سی-سیکشن کے بعد کب نہائیں؟

ایک آسان سا میڈیکل اصول ہے کہ کسی بھی جگہ پر ٹانکے لگنے کے بعد 48 سے 72 گھنٹے اس جگہ کو خشک رکھا جانا چاہئے۔ یہ انفیکشن کے رسک کو کم کرتا ہے۔ لیکن 48 سے 72 گھنٹوں کے بعد ضرور نہائیں۔ کیونکہ اس کے بعد نہ نہانے سے بھی زخم میں انفیکشن ہو سکتا ہے ۔

سی-سیکشن کے بعد یا نارمل ڈلیوری میں اگر ٹانکے لگے ہوں تو 72 گھنٹے بعد لازمی نہائیں اور ٹانکوں والی جگہ کو صابن اور گرم پانی سے دھوئیں اور خشک کریں۔ اگر جسم بھاری ہے اور ٹانکے جلد کے اندر دب رہے ہوں تو نہانے کے علاوہ انہیں دن میں تین چار دفعہ سپرٹ یا پائوڈین سے صاف کریں۔
ڈاکٹر نے جو دوائی دی ہو وہ ضرور کھائیں، ٹھنڈے گرم اور سائیڈ ایفیکٹس کے چکر میں نہ پڑیں۔
زیادہ تر انفیکشن زخم کو گندا رکھنے کی وجہ سے ہوتے ہیں۔
ڈھیلے ڈھالے لیکن صاف کپڑے پہنیں۔
ماں اور بچہ دونوں نارمل روم ٹمپریچر میں رہیں۔ پنکھا یا اے-سی کچھ نہیں کہتے۔ جتنا ماں اور بچہ آرام دہ ہوں گے اتنی ہی جلدی ان کی صحت اور روٹین بحال ہو گی۔

نارمل ڈلیوری کے بعد اگر ٹانکے لگے ہوں تو کیا کریں؟

نیم گرم پانی کے ٹب میں نمک ملا کر اس میں کچھ منٹ بیٹھیں۔ اسے Sitz Bath کہتے ہیں ۔

نارمل یا سی- سیکشن ، دونوں کیسز میں کسی بھی وجہ سے اگر ٹانکوں کے زخم میں سوجن یا درد شروع ہو جائے یا پیپ پڑ جائے یا ٹانکے کھل جائیں تو ڈاکٹر کو دکھائیں۔
خوش رہیں اور خوش رکھیں۔
#ایڈمن

وٹامن-ڈی چند علامات جو وٹامن-ڈی کی کمی کی وجہ سے ہو سکتی ہیں(ضروری نہیں کہ ان علامات میں آپ کو وٹامن-ڈی کی ہی کمی ہو۔ یہ...
03/07/2023

وٹامن-ڈی

چند علامات جو وٹامن-ڈی کی کمی کی وجہ سے ہو سکتی ہیں

(ضروری نہیں کہ ان علامات میں آپ کو وٹامن-ڈی کی ہی کمی ہو۔ یہ کسی اور وجہ سے بھی ہو سکتی ہیں۔)

-وزن بڑھنا
- موڈ میں تبدیلیاں یا خراب رہنا
- خشک جلد
- ہائی بلڈ پریشر
- شدید تھکن اور جسم میں درد رہنا
- جوڑوں میں درد
- ہاضمہ خراب رہنا
- کمزور قوت مدافعت
- توقع سے زیادہ پسینہ آنا

03/07/2023

آج کل گرمی کا موسم ہے اور لوگ گنے کا جوس شوق سے پیتے ھیں ۔ لیکن گنا خود دھو کر اپنا جگ اور گلاس ساتھ لے کر جوس والے کو کہنا کہ گنے کا جوس بنانے سے پہلے اپنے ھاتھ صابن سے دھو لےتو یہ ھم پاکستانیوں کے لیے ایک انوکھی بات ھوگی لیکن جس طرح گنے کا جوس بیچا جا رھا ھے اس سے یقینی طور پر آپ کو ہیپاٹائیٹس اور ٹائفائیڈ ہونے کے قوی امکانات ہیں
کیونکہ اکثر یرقان / ہیپاٹائیٹس کے مریضوں کو گنے کا رس پینے کا مشورہ دیا جاتا ہے اور جب وہ جوس پیتے ہیں تو دوکان والا گنے کو نہیں دھوتا اور ان کے گلاس کو پانی کی بالٹی میں ڈوبو کے اسی میں آپ کو جوس پیش کردیتا ھے ۔گنے کو جوس نکالنے سے پہلے دھونا ضروری ھے کیونکہ کھیت میں گنے کی فصل پر کیڑے مار سپرے کیئے جاتے ھیں اور انہیں دھوئے بغیر استعمال کرنا بجائے فائدے کے بہت بڑے نقصان کا باعث بن سکتا ھے۔ پاکستان میں ریسٹورینٹ ، ریڑھی، اور کوئی بھی کھانے کی اشیاء بیچنے والا برتن بہتے ہوۓ پانی سے نہیں دھوتا ۔ایک ہی بالٹی پانی میں سارا دن برتن ان آؤٹ ہوتے اور بیماریاں پھیلتی رہتی ہیں۔
باقی اور بھی کچھ باہر سے کھائیں تو اس بات کو یقینی بنائیں کہ پیش کرنے والے کے ہاتھ اور برتن صاف ہوں کیونکہ یہ آپ کی اور آپ کے خاندان کی صحت کا معاملہ ہے۔

اولاد سے بڑی دنیا میں شاید ہی کوئی نعمت ہو، انسان اولاد کے حصول کے لیے اپنی سی ہر کوشش کرتا ہے تب کہیں جا کر خدا اس کو ا...
29/06/2023

اولاد سے بڑی دنیا میں شاید ہی کوئی نعمت ہو، انسان اولاد کے حصول کے لیے اپنی سی ہر کوشش کرتا ہے تب کہیں جا کر خدا اس کو اولاد کی نعمت عطا کرتا ہے۔بعض اوقات اس نعمت کے ملنے میں کچھ تاخیر ہوجاتی ہے ، یہ وقت کیسے گزرتا ہے یہ وہی جانتا ہے جو اس آزمائش سے دوچار ہوتا ہے۔

ہمارے معاشرے میں خود کو سمجھانا آسان اور دنیا کو سمجھانا ایک مشکل امر ہے۔یہی وجہ ہے کہ شادی کے کچھ ماہ تک اگر خوشی کی خبر نہ آئے تو گھر والوں، رشتے داروں اور دنیا والوں کے سوالات دلوں میں نشتر کی طرح اترتے ہیں ،جو دل تو دکھاتے ہی ہیں روح تک کو اندر سے زخمی کردیتے ہیں۔

اللہ تعالیٰ نےاولاد کو دنیا میں بھیجنے کا ذریعہ میاں بیوی کو بنایا ہے، جو اخلاقی اور شرعی طریقہ اختیار کرتے ہوئے انھیں اولاد کی نعمت سے نوازتا ہے۔اس کے لیے لازم ہے کہ میاں اور بیوی دونوں کا صحت مند ہونا بہت ضروری ہے۔

ہمارے معاشرے میں اولاد پیدا نہ کرنے کا ذمے دار عموماًخواتین کو ٹھہرا یا جاتاہے،جو کہ سراسر غلط ہے۔خواتین شادی کے کئی سالوں تک اپنا علاج کرواتی ہیں ، بانچھ پن صرف خواتین میں ہی نہیں مردوں میں بھی ہوتا ہے، لیکن مرد اپنی انا کو سامنے رکھتے ہوئے اس بات کرنے کو تیار نہیں ہوتا۔

مردوں میں پایا جانے والا بانچھ پن لاعلاج نہیں ہوتا، بس اچھی طرز زندگی، معیاری خوراک، طاقتور غذائیں اور ادویات مل کر مردوں کو اس بیماری سے نجات عطا کرتے ہوئے ان کے آنگن میں پھول کھلانے کا سبب بن سکتی ہیں۔

سب سے پہلے تو یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ مردوں میں بانچھ پن کی کیا وجوہات ہوسکتی ہیں اور کس طرح اس کا علاج کیا جانا چاہیے۔وہ کیا عوامل ہیں جن کی وجہ سے مرد بانچھ پن کا شکار ہوجاتا ہے اور بعض اوقات ساری زندگی اپنی شریک حیات کو اولاد پیدا نہ کرنے کا قصور وار تصور کرتا ہے، جب مسئلہ خود اس کے اندر ہوتا ہے۔

مردوں کا بانچھ پن کیا ہے؟

مردوں کے سیمن میں اسپرم کی کمی یا ان کا کمزور ہونا مردوں میں بانچھ پن کہلاتا ہے۔

مردوں میں بانچھ پن کی وجوہات

مردوں میں بانچھ پن کی بہت سی وجوہات ہیں ان میں سے کچھ وجوہات ایسی ہیں اگر ان کا خیال رکھا جائے تو مردوں کو اس صورت حال کا سامناکرنے سے بچا جاسکتا ہے۔

نشہ آورادویات کا استعمال

دیکھا گیا ہے کہ عموماًمرد جب کسی ذہنی دبائو کا شکار ہوتے ہیں تو اس سے نجات حاصل کرنے کے لیے یا تو نشہ آور ادویات یا پھر الکوحل کا استعمال کثرت سے کرتے ہیں۔جن میں شراب نوشی یا پھر کوئی اور ایسا نشہ جو ذہن کو سکون پہنچاتا ہو۔نشہ آور شے یا ادویات ذہنی سکون تو پہنچا دیتی ہیں لیکن مردوں کے اسپرم پہ براہ راست اثرات مرتب کرتی ہیں جس کی وجہ سے ان میں اولاد پیدا کرنے کی صلاحیت کم ہوجاتی ہے۔ ۔

معدے کی خرابی

معدہ اچھی طرح کام کرے تو صحت برقرار رہتی ہے اس میں رکاوٹ پیدا ہوجائے تو اس کے اثرات جسم کے بہت سے حصوں پر ہوتے ہیں۔معدے کی خرابی سے جریان اور اح**ام جیسی بیماری کا مردوں کو سامنا رہتا ہے۔جو اسپرم کی کمزوری کا باعث ہیں

فضائی آلودگی

گردو و غبار اور گاڑیوں کا دھواں جب پھیپھڑوں کے ذریعے اندر داخل ہوتا ہے تو مردوں کے اسپرم کو بھی متاثر کرتا ہے، جس سے اسپرم غیر متوازن ہوجاتےہیں۔

تابکار شعائیں

یہ وہ خطرناک شعائیں ہوتی ہیں جو دکھائی تو نہیں دیتیں لیکن مردوں کی اولاد پیدا کرنے والی صلاحیت کو ختم کر کے رکھ دیتی ہیں۔موبائل فون، لیپ ٹاپ اور موڈیم سے یہ شعائیں خارج ہوتی ہیں ۔

گلے کے غدود میں سوزش

گلے کے غدود میں سوزش کے باعث مردانہ جرثومے بننے میں رکاوٹ آتی ہے اور بعض حالات میں مرد مکمل بانجھ پن کا شکار بھی ہوجاتا ہے۔

ڈپریشن

ڈپریشن ویسے تو ہوتا ہی خطرناک ہے، لیکن انسانی صحت کی تباہی کا بھی ذمے دار ہوتا ہے، چھوٹی چھوٹی باتوں پر ڈپریشن انسان کو اندر سے کھوکھلا کردیتا ہے۔جس کی وجہ سے مردوں کے اسپرم متاثر ہوتے ہیں اور مردانہ صلاحیت کم ہونا شروع ہوجاتی ہے۔

نیند کا نہ ہونا

نیند ایسی نعمت ہے جس کے بعد انسان خود کو تندرست اور توانا محسوس کرتا ہے۔اگر اس میں کمی واقع ہوجائے تو جسم کا سارا نظام درہم برہم ہو کر رہ جاتا ہے۔نیند کی کمی جہاں اور بیماریوں کو جنم دیتی ہے وہیں مردوں کی خاص طاقت یعنی اسپرم کی کمزوری کا بھی سبب بنتی ہے۔

آپریشن یا چوٹ

کھیل کے دوران کسی حادثے یا آپریشن کے باعث ٹیسٹیکلز کو خون پہنچانے والی شریانوں کو نقصان پہنچتا ہے، جس سے تولیدی جرثوموں کی افزائش متاثر ہوجاتی ہے اور جنسی عمل فائدہ مند نہیں ہوتا۔

مردانہ بانچھ پن کا علاج
مردانہ بانچھ پن کا علاج

سرجری کے ذریعے سپرم لے جانے والی نالیوں کو کھولنا۔ اس کے لیے مختلف ادویات میں بعض اوقات عضو تناسل میں ہونے والی سوزش بھی آپ کی زرخیزی میں رکاوٹ بنتی ہے، یہی وجہ ہے کہ ڈاکٹرز اینٹی بائیو ٹیکس کے ذریعے سوزش کا علاج کرتے ہیں۔

بانچھ پن میں مفید غذائیں

مرددں کےبانچھ پن کو دور کرنے کے لیے کچھ ایسی غذائیں ہیں جنھیں اگر روزمرہ استعمال میں رکھا جائے تو وہ ادویات سے بڑھ کر اثر دکھاتی ہیں اور اسپرم کو مضبوط بناتی ہیں اور اولاد جیسی نعمت عطا کرنے میں معاون ثابت ہوتی ہیں۔

ڈرائی فروٹ

ڈرائی فروٹ اپنے اندر بے پناہ طاقت اور مردوکے بانچھ پن کو ختم کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں، خون بناتے ہیں اور مادہ منویہ کو گاڑھا کرتے ہیں، جس سے اسپرم مضبوط ہوتے ہیں۔

چقندر

چقندر میں ایسے اینٹی آکسیڈینٹس پائے جاتے ہیں جو زیادہ عمر کے باعث لاحق ہونے والے بانجھ پن کو دور کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ اس میں نائٹریٹ بھی پایا جاتا ہے جو نظام دوران خون کو بہتر بناتا ہے۔ مردانہ کمزوری کو دور کرنے کے لیے بھی چقندر کا جوس نہائت مفید ہے۔

انار

انار مردوں کو جلد بوڑھا ہونے سے بچاتاہے۔اس کے ساتھ ساتھ ایسے افراد جو بانچھ پن کا شکار ہیں انار کا جوس ان کے لیے بہترین ہے۔انار میں وٹامن سی، وٹامن کے اور فولک ایسڈ سمیت کئی دیگر وٹامنز اور منرلز پائے جاتے ہیں۔

لیس دار سبزیاں

ایسی سبزیاں جن میں لیس زیادہ پایا جاتاہے مردوں کے بانچھ پن کو دور کرتی ہیں جن میں بھنڈی اور اروی خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

دودھ کا استعمال

جن مردوں کو دودھ پینے کی عادت ہوتی ہے ان میں مردانہ طاقت کی کمی کم ہی پائی جاتی ہے، دودھ قدرتی طور پر طاقت پہنچانے کا ذریعہ ہے لہذا دودھ کا استعمال جاری رکھیں دن میں دو مرتبہ دودھ پینے سے اسپرم مضبوط ہوتے ہیں اور اولاد کے پیدا کرنے کی صلاحیت بڑھتی ہے۔
ہمارے کلینک پہ زنانہ و مردانہ بانجھ اور کمزوری کا علاج جدید ادویات سے کیا جاتا ہے اس مسئلے کے تمام ٹیسٹ بھی کئے جاتے ہیں
ماہر جنسیات ڈاکٹرجواداحمدہاشمی 03107788508

مردانہ و زنانہ تولیدی و جنسی امراض کا علاج. زنانہ و مردانہ بانجھ پن کا علاج.  بے اولاد حضرات اور مردانہ کمزوری کے مریضوں...
29/06/2023

مردانہ و زنانہ تولیدی و جنسی امراض کا علاج.
زنانہ و مردانہ بانجھ پن کا علاج.
بے اولاد حضرات اور مردانہ کمزوری کے مریضوں کا مکمل یقینی علاج جدید ادویات سے کیا جاتا ہے.تمام ٹیسٹ بھی کئے جاتے ہیں
03455819995 رابطہ نمبر..

Infertility - بانجھ پن وجوہات اور علاج انفرٹیلیٹی یا بانجھ پن کا مطلب ہے کہ ایک شادی شدہ جوڑے کا باقاعدگی سے کم سے کم ای...
29/06/2023

Infertility - بانجھ پن

وجوہات اور علاج

انفرٹیلیٹی یا بانجھ پن کا مطلب ہے کہ ایک شادی شدہ جوڑے کا باقاعدگی سے کم سے کم ایک سال تک کوشش کے باوجود اولاد سے محروم رہنا ۔

ہر سات میں سے ایک جوڑے کو یہ مسئلہ ہو سکتا ہے ۔

تقریبا 84 فیصد جوڑے ایک سال کے اندر اندر کنسیو کر لیتے ہیں ۔ جن لوگوں کو اولاد کے لئے کوشش میں 3 تین سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہوتا ہے ان میں دیکھا گیا ہے کہ ہر چار میں سے ایک جوڑا چوتھے سال تک قدرتی طور پر بغیر علاج کے کنسیو کرتا ہے۔ باقی لوگوں کو علاج کی ضرورت ہو سکتی ہے۔

ڈاکٹر سے کب رجوع کیا جائے؟

اگر آپ کو باقاعدگی سے اولاد کے لئےکوشش کرتے ہوئے کم سے کم ایک سال کا عرصہ گزر چکا ہے لیکن حمل نہیں ٹھہرا تو آپ کو ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے ۔

انفرٹیلیٹی کی دو اقسام ہیں:

- پرائمری انفرٹیلیٹی - جب کسی کے ہاں کبھی بھی حمل نہ ٹھہرا ہو۔

- سیکنڈری انفرٹیلیٹی ۔ جب کسی کی ہاں پہلے ایک یا ایک سے زیادہ اولاد ہو لیکن دوبارہ کنسیو کرنے میں مشکل ہو رہی ہو۔

انفرٹیلیٹی کی وجوہات :

- خواتین میں انفرٹیلیٹی کی وجوہات :

1 - خواتین میں زیادہ تر اوولیشن کے نہ ہونے یعنی ایگز نہ بننے کی وجہ سے ایسا ہوتا ہے۔ اوولیشن نہ ہونے کی وجوہات میں پولی سسٹک اوورین سنڈروم یعنی پی-سی-او-ایس، وزن کا بڑھ جانا ، تھائروئیڈ کا مسئلہ یا وقت سے پہلے اووریز کا کام کرنا بند ہو جانا شامل ہیں۔
2 - پیٹ کی سرجری کے نتیجے میں فیلوپین ٹیوبز یا یوٹرس کو نقصان پہنچنا۔
3- فائبروئیڈز (Fibroids)
4- اینڈومیٹریوسس (Endometriosis )
5- پیلویک انفلیمیٹری ڈزیز (Pelvic Inflammatory Disease)
6- ادویات: بہت لمبے عرصے تک زیادہ مقدار میں ایسپرین یا بروفن کا استعمال ، کیموتیھراپی، ایٹی سائیکوٹک میڈیسن، منشیات
ہمارے ہاں مردانہ و زنانہ بانجھ پن تولیدی اور جنسی مسائل کے لئے تمام ٹیسٹ اور ان کا علاج جدید ماڈرن سائنس کے مطابق کیا جاتا ہے. ماہر جنسیات ڈاکٹر جواد احمد ہاشمی کلینک اڈا رنمل 03107788508

23/06/2023
01/06/2023

میٹرک پاس لڑکا یا لڑکی جس کو ہسپتال کے کام کا تجربہ یا شوق ہو رابطہ کریں. مناسب تنخواہ دی جائے گی
03007757420

30/04/2023

کل بروز سوموار یکم مئی 2023 کو ہاشمی کلینک اڈا رنمل پر فری میڈیکل کیمپ ہو گا. جس میں مفت چیک اپ. مفت الٹراساؤنڈ اور مفت ادویات دی جائیں گی

"Gratitude is wine for soul go and drink it"RUMI
16/04/2023

"Gratitude is wine for soul go and drink it"
RUMI

Address

Adda Ranmal Sharif
Mandi Bahauddin

Opening Hours

Monday 14:00 - 19:00
Tuesday 14:00 - 19:00
Wednesday 14:00 - 19:00
Thursday 14:00 - 19:00
Friday 14:00 - 19:00
Saturday 14:00 - 19:00
Sunday 14:00 - 19:00

Telephone

+923007757420

Website

Alerts

Be the first to know and let us send you an email when مردانہ جنسی مسائل اور علاج posts news and promotions. Your email address will not be used for any other purpose, and you can unsubscribe at any time.

Contact The Practice

Send a message to مردانہ جنسی مسائل اور علاج:

Videos

Share

Category

Nearby clinics



You may also like