The Herbal Clinic

health related problems and there herbal treatments, all without side effects
100% pure herbal medicines, & complete treatments

Operating as usual

08/06/2022

ڈاکٹر عفان قیصر صاحب کے لئے

✍🏻 سوشل میڈیا پر ڈاکٹر عفان قیصر صاحب کی ویڈیو وائرل ہو رہی ہے جس میں وہ پنسار سٹور اور ہومیو ڈاکٹر سے علاج کو بنیاد بنا کر اطباء پر تنقید کررہے ہیں
✍🏻 یہاں اہم بات یہ ہے کہ پنسار سٹور والے ان کوالیفائیڈ ہونے کے باوجود مریضوں کا علاج کررہے ہیں تو انہیں روکنا حکومتی اداروں کی ذمّہ داری ہے طبیب کو اس کا الزام نہیں دیا جاسکتا
✍🏻 دوسری بات یہ ہے کہ عبد الرب نیاز ہومیو ڈاکٹر ہیں حکیم نہیں ہیں پوری معلومات اور تصدیق کے بغیر اطباء پر الزام تراشی کرکے ڈاکٹر عفان قیصر صاحب نے ذمہ داری کا ثبوت نہیں دیا
✍🏻 ڈاکٹر عفان قیصر صاحب نے ایک اور ویڈیو میں کہا ہے کہ یونانی اور حکیمی دوائیوں میں گندے کیمکل شامل ہوتے ہیں
ڈاکٹر صاحب کی اس بات سے پتہ چلتا ہے کہ طب کے بارے میں انہیں بنیادی معلومات ہی حاصل نہیں ہیں ایسی صورت میں انہیں طب کے بارے میں رائے دینے کا کوئی حق حاصل نہیں ہے
✍🏻 ہم ڈاکٹر صاحب سے یہ معلوم کرنا چاہیں گے کہ
👈🏻 ایلوپیتھی کی کونسی دوا کیمیکلز ، ایسیڈز اور ایلیمنٹس سے خالی ہوتی ہے ؟
👈🏻 ڈاکٹر صاحبان اخلاقی جرات سے کام لے کر کیا ایلوپیتھی ادویات میں کیمیکلز ایسیڈز اور ایلیمنٹس کی موجودگی کے خلاف آواز اٹھا سکتے ہیں اور ان چیزوں کو اپنی ایلوپیتھی ادویات سے نکلوا سکتے ہیں ؟
👈🏻 کیا ایلوپیتھی ادویات میں اسٹیرائیڈ نہیں ہوتے ؟
👈🏻 کتنی ایلوپیتھی ادویات ہیں جن کے سائیڈ ایفیکٹس نہیں ہوتے ؟ کیا ہر دوا کی معلومات کے ساتھ ان کے سائیڈ ایفیکٹس ادویات کے معلوماتی پرچے اور نیٹ پر موجود نہیں ہیں ؟
👈🏻 سائیڈ ایفیکٹس کے باوجود وہ ایلوپیتھی ادویات استعمال کیوں کرائی جاتی ہیں ؟ ڈاکٹر صاحبان سائیڈ ایفیکٹس والی ان سب ایلوپیتھی ادویات کے خلاف آواز کیوں نہیں اٹھاتے ؟ ان پر پابندی کیوں نہیں لگواتے ؟ کم از کم وہ اتنا تو کرسکتے ہیں کہ سائیڈ ایفیکٹس والی کوئی بھی ایلوپیتھی دوا مریضوں کو تجویز نہ کریں آخر وہ ایسا کیوں نہیں کرتے؟ سائیڈ ایفیکٹس کے باوجود مریضوں کو وہ یہ ایلوپیتھی ادویات کیوں تجویز کرتے ہیں ؟ ایلوپیتھی ادویات کے سائیڈ ایفیکٹس معلوم ہوتے ہوئے وہ ادویات تجویز کرنا کیا یہ مریضوں پر ظلم نہیں ہے ؟ ڈاکٹر صاحبان کوئی بھی دوا تجویز کرتے وقت کیا مریضوں کو اس کے سائیڈ ایفیکٹس بتانے کی جرات کرسکتے ہیں ؟ تجویز کی جانے والی ایلوپیتھی ادویات کے سائیڈ ایفیکٹس کے بارے میں مریضوں کو اندھیرے میں کیوں رکھا جاتا ہے ؟ انہیں سائیڈ ایفیکٹس کے بارے میں کیوں نہیں بتایا جاتا ؟
👈🏻 ایلوپیتھی کے برصغیر میں آنے کے بعد اب تک کتنی ایلوپیتھی ادویات بہت زیادہ سائیڈ ایفیکٹس سامنے آنے کی وجہ سے بین کی جاچکی ہیں ؟ یہ بتانے میں کسی ڈاکٹر صاحب کو کیا کوئی شرمندگی تو محسوس نہیں ہوگی ؟
👈🏻 ایلوپیتھی ریسرچ کا کیا یہی معیار ہےاور کیا اسی معیار پر ایلوپیتھی اپنی ریسرچ پر فخر محسوس کرتی ہے کہ اعلیٰ ترین ریسرچ کے باوجود ایلوپیتھی کی کوئی دوا سائیڈ ایفیکٹس سے خالی نہیں ہے ؟
👈🏻 یورپ میں تو کہیں طب ہے نہ کوئی حکیم پھر وہاں گردے فیل ہونے کی شرحِ سب سے زیادہ کیوں ہے ؟ ڈاکٹر صاحبان طبی ادویات اور اطباء پر الزام تراشی سے پہلے کیا یورپ میں سامنے آنے والی اس اہم حقیقت پر غور کرنے کی زحمت کریں گے ؟
👈🏻 علاج کا مطلب بیماری سے مریض کی صحت یابی ہوتا ہے ایلوپیتھی کیسا طریقہ علاج ہے جس میں بیسیوں امراض میں مریض کو تاحیات دوا کھانی پڑتی ہے بیماری اور ایلوپیتھی ادویات ساری عمر ساتھ ساتھ چلتے ہیں سائیڈ ایفیکٹس کے نتیجے میں کئی اور بیماریاں ساتھ میں شامل ہوتی رہتی ہیں اور اصل بیماری کے ساتھ پھر سائیڈ ایفیکٹس سے ہونے والی بیماریوں کی ادویات کا بھی مسلسل اضافہ ہوتا رہتا ہے اور ساری عمر ادویات کھانے کے باوجود مریض پھر بھی اسی بیماری سے مرتا ہے کیا اسی کا نام علاج ہے اور اسی علاج پر ایلوپیتھی اور ڈاکٹر صاحبان کو فخر ہے ؟
1 سادہ سا گیسٹرائٹس کا مریض تک تو ساری زندگی omeprazol فیملی کی ادویات سی باہر نہیں نکل پاتا اگر ان معدہ و جگر کے سپیشلسٹ ڈاکٹروں کے ہتھے چڑھا رہے تو۔۔۔۔۔
جو کہ شاید پودینہ، سونف اور ہلدی کے مرکب سے مکمل طور پر شفاءیاب ہو جاتا ہے۔۔۔۔۔
ڈاکٹر صاحب اگر اپنے تکبر سی باہر نکلیں تو ممکن ہے ان کو پتہ چل جائے کہ جس ایلوپیتھی پر آج یہ گھمنڈ کر رہے ہیں۔۔۔ اس کی عمارت سے اگر طب کی بنیاد نکال دی جائے تو یہ دھڑام سی نیچے آ گریں گے۔۔۔۔ جس جالینوس Galen ، یعقوب الکندی، ذہراوی کی کتب اور تحقیق پر ایلوپیتھی کی بنیاد رکھی گئی، وہ طب یونانی ھربل ادویات کے ماہرین (حکیم) ہی تھے۔
خیر میرا مقصد کسی کو اونچا یا نیچا دکھانا نہیں ہے، صرف اتنا کہوں گا کہ طب پر تنقید کرنے سے پہلے کسی اصلی حکیم کے پاس کچھ دیر بیٹھ کر تھوڑی سی معلومات ضرور حاصل کر لیں اور اپنا تکبر توڑ کر انسان ہونے کا ثبوت دیں۔ تنقید برائے تنقید سے کسی کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔
اور ہربل ادویات کے فوائد اور اس کی صداقت کو مزید جاننے کے لیے اگر کسی قسم کی معلومات یا راہنمائی چاہیے ہو تو بندہ حاضر ہے، اور اگر تسلی نہ ہو اور کوئی بڑائی تنگ کرے تو WHO ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کی سفارشات برائے طبی ادویات کو تھوڑا سا وقت دے دیں، کافی تسلی ملے گی۔
آخر میں بس اتنا کہوں گا کہ
👈🏻 کسی بڑے ہسپتال کے سامنے کھڑے ہو کر دیکھیں کہ روزانہ کتنے مریض مرتے ہیں مگر بدنام طب اور طبیب کو کیا جاتا ہے آخر کیوں ؟
ڈاکٹر صاحبان اطباء پر الزام تراشی کی بجائے اپنے گھر کی فکر کریں تو انسانیت پر ان کا یہ احسان عظیم ہوگا

26/04/2022

زبان کی لکنت کی وجوہات اور علاج
زبان کی لکنت یا ہکلانے سے مراد بولنے میں کسی قسم کی خرابی کا پیدا ہوجانا ہے جس سے کوئی بھی انسان یا تو رک رک کر بولتا ہے یا الفاظ بار بار دہرانے لگتا ہے ۔ اس کے ساتھ ساتھ ایسے شخص کو دیگر مشکلات کا سامنا بھی رہتا ہے جیسے کے آنکھوں کا بار بار جھپکنایا ہونٹ کپکپانا۔ ایسے لوگوں کو دوسروں سے بات کرنے میں جھجک محسوس ہوتی ہے جس کے باعث ان کی زندگی کا معیار بھی متاثر ہوجاتا ہے ۔ زبان میں لکنت آسانی سے ظاہر ہو جاتی ہیں۔ عام طور پر ایسے لوگ فون پہ یا کسی حجوم میں بات کرتے ہوئے ہکلانے لگتے ہیں ۔ البتہ گانے ، زور زور سے پڑھنے اور بات کرنے سے وقتی طور پر اس میں کمی آسکتی ہے ۔

زبان کی لکنت کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں ۔ گھر ،اسکو ل یا دفتر میں ملنے والا ذہنی دباؤ ،جینز میں پایا جانے والا کوئی نقص یا کوئی جسمانی عضراس کی ممکنہ وجوہات میں شامل ہیں۔ بات کرنے کی اس تکلیف کا سب سے زیادہ شکار بچے ہوتے ہیں ۔ دو سے پانچ سال کی عمر میں اکثر بچے ہکلانے لگتے ہیں جب ان کی بولنے کی صلاحیت بڑھ رہی ہوتی ہے ۔ ایک اندازے کے مطابق پانچ فیصد بچے اس عمر میں ہکلانے لگتے ہیں ۔ یہ ہکلاناعموماً وقتی ہوتا ہے جو آہستہ آہستہ ٹھیک بھی ہو جاتا ہے ۔

انسانی آواز کئی مربوط پٹھوں کی حرکت سے پیدا ہوتی ہے ۔ اس عمل میں سانس لینے، پٹھوں ، ہونٹوں اور زبان کے حرکت کرنے کا اہم کردار ہوتا ہے ۔ نرخرے اور اس کے اردگرد موجود پٹھوں کی حرکت کا تعلق ذہن سے ہوتا ہے ۔دماغ بولنے کے ساتھ ساتھ سننے اور چھونے کی صلاحیتوں کو بھی مانیٹر کرتا ہے ۔ زبان کی لکنت کی دو اقسام ہوتی ہیں ۔ ایک قسم کی لکنت و ہ ہوتی ہے جو عام طور پر بچوں کی زبان میں اس وقت پیدا ہوجاتی ہے جب ان کے بڑھنے کی عمر ہوتی ہے یعنی دو سے پانچ سال کی عمر میں۔ دوسرے قسم کی لکنت اعصابی ہوتی ہے جس کی وجہ سر پہ لگنے والی چوٹ، دل کا دورہ یا کوئی ذہنی دباؤ ہو سکتی ہے ۔ ایسے میں دماغ اور آواز پیدا کرنے والے پٹھوں میں رابطہ تعطل یا توقف کا شکا ر ہوجاتا ہے ۔

فی الوقت زبان کی لکنت سے بچنے کا طریقہ تو دریافت نہیں ہو پا یا ہے البتہ اس کے علاج کے لیے مختلف اقسام کے طریقے استعمال کیے جاتے ہیں ۔ علاج کی نوعیت انسان کی عمر ، تبادلہ خیال کرنے کے مقاصد اور دیگر عوامل پر منحصر ہوتی ہے ۔ چھوٹے بچوں کو عام طور پر اسپیچ تھیراپی دی جاتی ہے ۔ ماہرین طب کا ماننا ہے کہ ابتدائی عمر میں ہی اگر بچوں کی اس تکلیف کا علاج کرلیا جائے تو انھیں آگے چل کر اس کا سامنا نہیں کرنا پڑتا۔ ہکلاہٹ کو دور کرنے کے لیے بچوں کے ماں باپ کو بچوں کو گھر میں ایک مثبت ماحول مہیا کرنے اور انہیں اپنی رائے کا اظہار کرنے کی اجازت دینے کا مشورہ دیا جاتا ہے ۔ جبکہ بچوں کو ہر وقت ٹوکنے سے منع کیا جاتا ہے۔ ایسے بچوں سے دھیمے لہجے میں دھیرے دھیرے بات کرنی چاہیے تاکہ ان پرزیادہ دباؤ نہ پڑے۔ ساتھ ہی کھل کر اور ایمانداری سے ایسے بچوں کی بات سننے اور سمجھنے کی ضرورت ہوتی ہے ۔

اسپیچ تھیراپی میں بچوں کو رک رک کے بات کرنے ، گفتگو کے دوران زیادہ سے زیادہ سانس لینے اور چھوٹے چھوٹے جملے بولنے کا مشورہ دیا جاتا ہے ۔ اس کے علاوہ بچوں سے ان کی زندگی اور ذہنی تناؤ کے بارے میں بھی بات چیت کی جاتی ہے ۔ معالج بڑوں کو بھی عام طور پر اسپیچ تھیراپی لینے کا ہی مشورہ دیتے ہیں ۔ زبان کی لکنت کے لیے ادویات کا استعمال درست نہیں تصور کیا جاتا ، البتہ ڈپریشن یا اسٹریس دور کرنے کے لیے ادویات دی جاسکتی ہیں ۔

زبان کی لکنت دور کرنے کے لیے چند گھریلو توٹکے بھی اپنائے جاسکتے ہیں ۔ جن میں سے چند مندرجہ ذ یل ہیں:

*ایسے افرادکو صبح سویرے شہد اور کلونجی کا سفوف زمزم کے پانی کے ساتھ دینے کا مشور دیا جاتا ہے۔

*عاقر قرحا لاکر ایک قسم کی جڑی بوٹی ہے جو کسی بھی پنساری کی دکان پر مل جاتی ہے۔ اسے پیس کر اس کا چار گرام پسی ہوئی سیاہ مرچ کے ساتھ ملا لیں۔ اس سفوف کے دو بڑے کھانے کے چمچے شہد میں ملا کر رکھ لیں اور دن میں دو تین بار زبان کے نیچے اور اوپر انگلی پر لگا کر مل لیں ۔

*دو کھانے کے چمچ سہاگہ لیں ۔ اس کے پتھر کو چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں ٹوڑ کر توے پر رکھ کر پکائیں ۔ سہاگہ پگھل جائے تو چولھا بند کردیں اور توے پر ہی کچھ دیر چھوڑ دیں ۔ تھوڑی دیر بعد یہ پھولنا شروع ہوجائے گا ۔ اچھی طرح پھولنے کے بعد اسے پیس لیں اور اسٹور کرلیں ۔ روزآنہ ایک چائے کے چچ شہد میں چٹکی بھر سفوف دال کر زبان پر مل لیں ۔ اس عمل کو دن میں تین بار دہرائیں۔ ایک مہینے تک اس عمل کو جاری رکھنے سے زبان کی لکنت کافی حد تک کم ہوجائے گی ۔ہمارے مطب پر اکسیر لکنت تیار کی جاتی ہے جو کہ لکنت کے شکار افراد کے لیے بہت مفید ثابت ہوئی ہے۔

Learn Hijamah الحجامۃ in Urdu/ Hindi 18/04/2022

Learn Hijamah الحجامۃ in Urdu/ Hindi

https://youtu.be/lkyNm1fnb5A

Learn Hijamah الحجامۃ in Urdu/ Hindi Hijamah الحجامۃ is the sunnah way of detox. the treatment which is emphasized for regaining the health, in this Islamic Healing Practice, we work on proper p...

Learning Chiropractic Urdu/ Hindi Dr.Alimalik 17/04/2022

Learning Chiropractic Urdu/ Hindi Dr.Alimalik

https://youtu.be/r2Ga1hoOKto

Learning Chiropractic Urdu/ Hindi Dr.Alimalik this is the first video on learning Chiropractic in Urdu or Hindi. Dr. Muhammad Ali Malik is in practice for the last 3 years and he is helping people with s...

25/02/2022

"نزلہ زکام کا سادہ علاج"

نزلہ زکام یا کوریزا (Coryza) سانس کاایک عام مسئلہ ھے جس کی وجہ وائرل انفیکشن کی اقسام ھیں اور ان میں سب سے عام انفلوئنزا ھے۔
انفلوئنزا وائرس اور اس کی مختلف اقسام کی وجہ سے متاثرہ افراد میں مختلف تبدیلیاں دکھائی دیتی ھیں۔ اس بیماری میں حساسیت(الرجی) اور ماحولیاتی اثرات معاون عناصر ھو سکتےھیں۔

لفظ "نزلہ" ایک مکمل اصطلاح ھے جو مختلف علامات کو بیان کرتی ھے جیسے چھینکیں، گیلی ناک، بہتی ھوئی ناک، گلے میں خارش، سر کا بھاری پن ، جسم میں درد، سر درد، بدھضمی، متلی، پیٹ میں درد، الٹی، اسہال اور بخار۔
محمد یونس ھرگانوی صاحب کی ایک نظم ماہنامہ مسرت، پٹنہ(بھارت) جنوری 1967 میں شائع ھوئی۔ اس کا ایک قطعہ بہت دلچسپ ھے۔
فرماتے ھیں:
جب نکلتے ھیں چھینک کے بچے
آدمی کو زکام ھوتا ھے
آنکھ جلتی ھے ناک بہتی ھے
سانس لینا حرام ھوتا ھے

نزلہ کے بار بار حملے قوت مدافعت کی کمی کے عکاس ھیں جو اکثر ناکافی آرام کی وجہ سے ھوتی ھے۔ اس کے علاوہ بہت زیادہ روغنی کھانے، ذھنی تناؤ، سردی اور نمی کی موجودگی میں رھنا بھی وجہ ھو سکتی ھیں۔

بار بار کا نزلہ زکام، فرد کو ثانوی طور پر سانس کی نالی کے نچلے حصے میں انفیکشن کا شکار بنا سکتا ھے۔ ابتداء میں ھی مستقل توجہ اور مناسب علاج نزلہ زکام سے ھونے والی پریشانی سے بچا سکتا ھے۔

برصغیر میں رائج طبوں میں "تریکاٹو" ایک سادہ سا نباتاتی مرکب ھے جس کے نباتاتی اجزاء سونٹھ، کالی مرچ اور مگھاں ھیں۔ اس کو کتب میں تریکٹا بھی لکھا جاتا ھے۔
اس مرکب کے استعمال اور تجویز کردہ احتیاطی تدابیر پر عمل پیرا ھونے سے عام نزلہ زکام کا علاج کامیابی سے کیا جا سکتا ھے۔ اطباء حضرات اپنی حذاقت سے اگر اسے دور حاضر کے خوفناک انفلوئنزا پر بھی دیگر نسخہ جات کے امتزاج سے استعمال کرائیں تو بہتر نتائج کی توقع کی جا سکتی ھے۔

"تریکاٹو پاؤڈر"
یہ ایک سادہ سی فارمولیشن ھے جس میں عام طور پر استعمال ھونے والی تین خشک بوٹیوں یعنی ادرک (سونٹھ)، کالی مرچ (فلفل سیاہ) اور مگھاں (پپپلی، فلفل دراز) کو برابر مقدار میں باریک سفوف بنا کر مکس کیا جاتا ھے۔ یہ تینوں اجزاء برصغیر میں باورچی خانے میں استعمال ھونے والے عام مصالحے ھیں۔

تریکاٹو سنسکرت کا لفظ ھےاوراس کے لفظی معنی 'تین تیکھے'ھیں کیونکہ اس میں استعمال ھونے والے تینوں اجزاء بنیادی طور پر تیز ذائقہ والے ھوتے ھیں.

" تریکاٹو پاؤڈر میں شامل نباتات کے کیمیائی اجزاء"
سونٹھ کے اھم کیمیائی اجزاء:
روغن فراری، ایلکلائیڈ (جنجرول، شوگول)، رال اور نشاستہ۔
کالی مرچ کے اھم کیمیائی اجزاء:
الکلائڈز (پائپرین، chavicine، piperidine piplartine) اور روغن فراری( essential oils)۔
مگھاں کے اھم کیمیائی اجزاء:
روغن فراری اور الکلائڈز (پائپرائن، سیسامین اور پیپلارٹائن)۔

"تیاری کا طریقہ"
1) تینوں اجزاء 50, 50 گرام لے کر صاف کر کے نمی کو دور کرنے اورآسانی سے پیسنے کے لئےمزید خشک کریں۔
2) ھر جزو کو گرائنڈر میں باریک پاؤڈر ھونے تک پیس لیں۔
3) پاؤڈر کو 85 سائز کی جالی کے ذریعے چھلنی کر کے ریشے اور دیگر موٹے موٹے ذرات کو نکال دیں۔
4) تینوں اجزاء کے پاؤڈر کو برابر وزن میں مکس کر کے شیشے کی ائیر ٹائٹ خشک بوتل یا فوڈ گریڈ پلاسٹک کے کنٹینر میں براہ راست سورج کی روشنی سے دور خشک اور ٹھنڈی جگہ پر سٹور کریں۔
اس پاوڈر کی رنگت سیاہ بھوری ھوتی ھے اور یہ ایک سال تک استعمال کرنا بہتر رھتا ھے۔

"مرکب دوا کی خصوصیات"
یہ پاوڈر دافع سوزش، دردکش، مخرج بلغم اور ہاضمم ھوتا ھے.

"مقدار خوراک اور طریقہ استعمال"
بالغ افراد کی خوراک 2 گرام دن میں دو سے تین بار ھے۔اسے گرم دودھ یا پانی یا شہد کے ساتھ استعمال کریں۔
بچوں کو عمر کے مطابق 125 ملی گرام سے 500 ملی گرام تک دن میں دو سے تین بار شہد یا پانی کے ساتھ۔
دوسرا طریقہ یہ ھے کہ ایک کپ دودھ میں مقدار خوراک کے مطابق شامل کر کے اسے چند منٹ کے لیے ابالیں اور گرم گرم پی لیں یا پلا دیں۔
مزید یہ کہ
تریکاٹو بیماریوں کو دور کرنے کے لیے شہد کے ساتھ ملا کر استعمال کیا جاتا ھے۔ جیسا کہ نزلہ، ناک کی سوزش، کھانسی، سانس پھولنا، دمہ، بدہضمیاور موٹاپا ۔ یہ نظام ہاضمہ کو بھی بہتر کرتا ھے۔

"نزلہ زکام میں احتیاطی تدابیر"
(1) عام نزلہ زکام میں مبتلا مریضوں کو براہ راست
ٹھنڈی ھوا کا سامنا، مرغن کھانا، ٹھنڈا پانی پینا، بول و براز کو روکنا، فرش پر لیٹنا اور دن کے وقت سونے سے روکنا چاھیے۔
(2) ہلکا مصالحہ دار کھانا ، نمکین ذائقہ والی اشیاء، دھی، لہسن، گرم پانی، بینگن کا بھرتہ اور سبز چنوں کا گرم سوپ پینا عام سردی لگنے میں مفید ھے۔
(3) سر کو ٹوپی یا کسی گرم کپڑے سے ڈھانپنا، بھاپ لینا، سر کی مالش، گرم نمکین پانی سے غرارے کرنا اور غصے سے بچنا عام نزلہ زکام سے بحالی میں معاونت کرتے ھیں۔
4) کولڈ ڈرنکس، کولڈ جوس، آئس کریم، زیادہ چکنائی دار اور بہت خشک خوراک سے پرھیز کریں۔ گرم اور ھوادار کمرے میں رھیں۔

"حفاظتی پہلو"
(1) تریکاٹو کا قدیم طبی کتب میں کسی قسم کے سائیڈ ایفیکٹ کا ذکر نہیں کیا گیا ھے۔ کلینیکل مطالعات نے بھی تجویز کردہ خوراک کے ساتھ علاج کیے جانے والے مریضوں میں منفی اثرات کا کوئی ثبوت نہیں دیا۔
2) چونکہ تریکاٹو پاؤڈر کا مزاج گرم ھے اس لئے بڑی خوراک سے گریز کیا جائے کیونکہ مریض معدہ میں جلن کی شکایت کر سکتا ھے یا پیشاب میں جلن وغیرہ۔ ایسے حالات میں فوری طور پر اس کا استعمال روک دیا جائے اور مریض کو دودھ وافر مقدار میں لینے کا مشورہ دیا جائے۔
(3) حاملہ خواتین کے لیے اس دوا کا استعمال مناسب نہیں ھے۔ تاھم اگر دودھ پلانے والی ماں لے رھی ھو تو یہ دوا بچے کے لیے محفوظ ھے۔

کچھ نازک مزاج افراد کو خاندان میں کسی ذمہ داری کے وقت اچانک زکام ھو جاتا ھے اور اس کا واویلا بھی خوب ھوتا ھے۔ ایسا زکام کام ھو جانے کے بعد بغیر کسی علاج کے ٹھیک ھو جاتا ھے۔
ایسے وقتی نزلہ بردار افراد کے لیے جناب مونس فراز صاحب کا شاعرانہ فرمان ھے کہ
" ٹی وی پہ نیوز آ گئی ان کے زکام کی
لیکن ھمارے قتل کا چرچا نہیں ھوا"

دعاگو: پروفیسر حکیم *محمد علی ملک*

Videos (show all)

Back pain removed by Hijamah 1st session

Location

Telephone

Address


Near Muslim High School, Ajmal Tibbia College, Saidpur Road
Rawalpindi
46000

Opening Hours

Monday 10:00 - 14:00
16:00 - 20:00
Tuesday 10:00 - 14:00
16:00 - 20:00
Wednesday 10:00 - 14:00
16:00 - 20:00
Thursday 10:00 - 14:00
16:00 - 20:00
Friday 10:00 - 14:00
16:00 - 20:00
Saturday 10:00 - 14:00
16:00 - 20:00

Other Alternative & Holistic Health in Rawalpindi (show all)
Fakhar Herbal Online Fakhar Herbal Online
Misrial Road
Rawalpindi, 46000

Fakhar Herbal Dawakhana deals in all types of Herbal Treatments with Natural Ingredients (herbs).

KHAN Homeopathic Clinic   www.drtariqkhan.com KHAN Homeopathic Clinic www.drtariqkhan.com
Rawalpindi, 46000

He is Member National Council for Homeopathy, Government of Pakistan and First Expert Member (Homeopathy) Enlistment Evaluation Committee DRAP ( Drug Regulatory Authority of Pakistan), Government of Pakistan. He is Ph.D Scholar, UK qualified Homeopath.

AWAKE Healing AWAKE Healing
Rawalpindi

بیماری اور شفاء اللہ تعالیٰ کی طرف سے۔ دعائے خیر سب کے لیئے

Luqman Haider Dawa Khana Luqman Haider Dawa Khana
Rawalpindi, 46000

Luqman Haider Dawakhana

Ajmal Tibbia College Rawalpindi. 0321-5899587 Ajmal Tibbia College Rawalpindi. 0321-5899587
Rawalpindi, 46000

Ajmal Tibbia College , Rawalpindi, Pakistan. Cell:0334-7142128. 0333AJMAL51 0300-8842040 Web site: www.atcr.edu.pk E-mail: [email protected] Ajmal Tibbia College Rawalpindi © 1893-2022

Homoeopathic Dr. Rehan's Family Clinic Homoeopathic Dr. Rehan's Family Clinic
Street No. 3 Ayub Colony, Khayyaban-e-Tanveer, Chaklala Scheme III,
Rawalpindi, 46000

We HELP you to fight disease and WIN in life.

ھادی دواخانہ ھادی دواخانہ
Shop # 13, Zakki Shah Plaza, Kurri Road, Near Transformer Chowk, Sadiqabad
Rawalpindi, 44000

ھادی دواخانہ۔ راولپنڈی-پاکستان نیچرل وے آف ٹریٹمنٹ قدرتی طریقہ علاج

Reiki healing and beauty care Reiki healing and beauty care
House#16,st#9,River Gardens Islamabad On Express High Way.
Rawalpindi, 46000

clinic is aimed to provide reiky treatment to the desiring individuals. also yoga classes are arranged for the yoga lovers.

Pain Clinic at Fatima Hospital Pain Clinic at Fatima Hospital
Fatima Hospital Fazal Town Near Bank Alflah Airport Road
Rawalpindi, 46000

کمردرد مہروں کادرد گھٹنے کا درد کندھے کا درد. بغیر اپریشن قابل علاج

Astrologist Zohaib Astrologist Zohaib
Rawalpindi

If You are Relax in Your Life You Can Get Solution of Your Problems & Make Your Life Easy & Peaceful.

Hijama Hijama
Alhijama Clinic Near Jinnah Park Opposite Askari 10 Jhunda
Rawalpindi, 46000

hijama is Sunnah of Holly Prophet Muhammad Peace Be Upon Him. The Sunnah Days for Hijama are 17,19, 21 of islamic calendar. it's also called blood cupping

Havi Homeopathic Clinic Havi Homeopathic Clinic
The MidCity Mall, Murree Road
Rawalpindi, 46000

Best Homeopathic Clinic in the town!