AsiF Dawakhana Malikwal

AsiF Dawakhana Malikwal Jishmani O Rohani Mashayail ka Hall
(13)

Happy new year 2023
31/12/2022

Happy new year 2023

29/12/2022

اسلام وعلیکم آج شام 7:00 بجے " نمونیہ" کے حوالےسے FM88 پر میرا پروگرام لائیو نشر ہوگا آپ پروگرام facebook پر FM 88 کے پیج پر بھی دیکھ سکتے ہیں

22/12/2022
11/12/2022

بانجھ پن
اولاد اللّٰہ کریم کا عطا کردا ایک خوبصورت ترین تحفہ ہے جس کے نا ہونے سے انسان خود کو نامکمل سمجھتا ہے ایک ننا منا سا بچہ والدین کو وہ خوشی دتیا ہے جسے وہ شمار بھی نہیں کر سکتے شادی کا مقصد ہے اگر یہ مقصد پورا نہ ہوسکے تو شادی ادھوری تصور کی جاتی ہے
اولاد کا نا ہونا کبھی کبھی انسان کو مایوسی کی طرف لے جاتا ہے اکثر شادی شدہ جوڑے غلط تشخیص اور غلط دوائیاں استعمال کے بعد خود کو بانجھ پن کا شکار کر لیتے ہیں
اللّٰہ کریم نے انسان کی بقاء اس کائنات میں بہت سے نظامات بنائے ہیں ان میں سے ایک جنسی نظام ہے اس نظام میں خرابی بانجھ پن کہلاتا ہے

ماہریِن طب نے بانجھ پن کی مختلف تعریفیں کی ہیں ماہرین کا کہنا ہے کہ "کوئی شادی شدہ جوڑا ایک سال تک کا عرصہ ایک ساتھ رہے اور وظیفہ ازدواجیت بھی مسلسل ادا کرتے رہیں اور اولاد پیدا نہ کر سکیں تو ایسا جوڑا بانجھ کہلاتا ہے "

بانجھ پن کی دو اقسام ہیں
مردانہ بانجھ پن
زنانہ بانجھ پن

1: مردانہ بانجھ پن

اگر کوئی مرد وظیفہ ازدواجیت ادا کرنے کے باوجود اولاد پیدا کرنے میں کامیاب نا ہو تو اس مرد کو بانجھ تصور کیا جاتا ہے اور اس کا علاج ممکن ہے بہت سے لوگ بانجھ لفظ کو ایک گالی کی طرح سمجھتے ہیں جب کہ یہ قبلِ علاج مرض ہے بس درست تشخیص اور درست علاج کی ضرورت ہے اس کی بہت سی وجوہات ہیں جن میں سے چند درجہ ذیل ہیں

سیمن انفیکشن
سرعت انزال
دائمی سوزاک
پرانا ٹائفید
ہپیٹاٹیس بی, سی
ایزوسپرمیا
لیگو سپرمیا
نفسیاتی امراض
ویرکوری سیل
اور دیگر کئی اسباب علامات ہیں

2 : زنانہ بانجھ پن

جس عورت کے ہاں بچہ نہ ہو معاشرہ اسے بانجھ سمجھتا ہے بلکہ کچھ لوگ تو اس خاتون کو منحس سمجھتے ہیں جب کہ بانجھ پن بھی دیگر بیماریوں کی طرح بیماری ہے اور اس کے بے شمار علاج ہیں علاج سے پہلے بانجھ پن کے اسباب کو جاننے کی ضرورت ہے

زنانہ بانجھ پن کےاسباب

سوزش و ورم الرحم
دائمی لیکوریا
ماہواری کے مسائل
ٹیوب کی بلاکیج
انڈوں کا نا بننا یا کمزوری
رحم کی کمزوری
ڈیپرشن
اٹھرا
سسٹ /فائبر اڈز
اور دیگر کئی اسباب و وجوہات ہیں

" درست تشخیص اور خالص جڑی بوٹیوں سے علاج ہی صحت اور شفاء کا اصل سبب ہے "

مزید معلومات اور فری چیک اب کے لئے ان نمبرز پر رابطہ کریں 03229793919 / 03017453919

https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=464855079042340&id=100065535557735&sfnsn=scwspmo
28/11/2022

https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=464855079042340&id=100065535557735&sfnsn=scwspmo

ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ؟

ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﻣﻮﻡ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﭼﮑﻨﺎ ﻣﺎﺩﮦ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺟﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻏﺬﺍ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﺫﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﺳﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺟﺴﻢ ﮐﯽ ﺳﺎﺧﺖ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﺧﻠﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﺸﻮﻭﻧﻤﺎ ﺍﻭﺭ ﺻﺤﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺖ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮨﺎﺭﻣﻮﻧﺰ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﻧﻈﺎﻡ ﮨﺎﺿﻤﮧ ﮐﯽ ﮐﺎﺭﮐﺮﺩﮔﯽ ﮐﺎ ﺍﮨﻢ ﺟﺰﻭ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﯾﮧ ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﺣﺮﺍﺭﺕ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎ ﻝ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺍﯾﮏ ﻣﻘﺮﺭﮦ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺭﮨﮯ ﺗﻮ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺗﺎ ﮨﻢ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﻣﻘﺮﺭﮦ ﺣﺪﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺑﮩﺖ ﺳﺎﺭﮮ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺟﻨﻢ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﺴﻢ ﮐﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﺧﺼﻮﺻﺎً ﺩﻝ ، ﺩﻣﺎﻍ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﯾﺎﻧﻮﮞ ﭘﺮ ﺑﮩﺖ ﻣﻨﻔﯽ ﺍﺛﺮ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ؟
ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ، ﮐﺴﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻏﺬﺍ ﭘﺮ ﻣﻨﺤﺼﺮ ﮨﮯ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﺮ ﺍﻧﺤﺼﺎ ﺭ ‏( 80 ﻓﯿﺼﺪ ‏) ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺟﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﻭﺍﺭﯼ ﺻﻼﺣﯿﺖ ﭘﺮ ﻣﻨﺤﺼﺮ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﮕﺮ ، ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻓﯿﮑﭩﺮﯼ ﮨﮯ۔ ﮐﭽﮫ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻓﯿﮑﭩﺮ ﯼ ﻣﻮﺭﻭﺛﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﮐﮯ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﺮﺩﮦ ﺣﺪﻭﺩ ﺳﮯ ﺑﮍﮬﺎ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﺑﮍﮬﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺧﻮ ﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﻧﺪﺭﻭﻧﯽ ﺗﮩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﮯ ﺫﺧﯿﺮﮮ ‏( Plaques ‏) ﺑﻦ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﯾﺎ ﺧﻮ ﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﺎﮞ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺑﻨﺪ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﮐﻮ ﻧﻘﺼﺎ ﻥ ﭘﮩﻨﭽﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﻏﺬﺍ ﮐﯽ ﮐﻦ ﮐﻦ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ؟
ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﺷﺪﮦ ﻏﺬﺍ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻏﺬﺍ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺪﺭﺟﮧ ﺫﯾﻞ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ ﮨﯿﮟ۔
* ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﺍ ﮔﻮﺷﺖ
* ﺍﻧﮉﮮ ﮐﯽ ﺯﺭﺩﯼ
* ﮈﯾﺮﯼ ﮐﯽ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﻣﺜﻼًﺩﻭﺩﮪ ، ﺩﮨﯽ ، ﻣﮑﮭﻦ ، ﭘﻨﯿﺮ۔
* ﮔﺮﺩﮦ ، ﮐﻠﯿﺠﯽ ، ﻣﻐﺰ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﺍﻝ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔
* ﻣﺮﻏﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﭽﮭﻠﯽ ﮐﮯ ﮔﻮﺷﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻧﺴﺒﺘﺎً ﮐﻢ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔
* ﻧﺒﺎﺗﺎﺕ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﺩﮦ ﻏﺬﺍ ﻣﺜﻼً ﭘﮭﻞ ، ﺳﺒﺰﯾﺎﮞ ، ﺩﺍﻟﯿﮟ ، ﻣﯿﻮﮦ ﺟﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﺎﻓﯽ ﮐﻢ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﮐﺘﻨﯽ ﺍﻗﺴﺎﻡ ﮨﯿﮟ؟
* ﺍﯾﭻ ﮈﯼ ﺍﯾﻞ ‏( HDL: High Density Lipoprotein ‏) ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ
* ﺍﯾﻞ ﮈﯼ ﺍﯾﻞ ‏( LDL : Low Density Lipoprotein ‏) ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ
* ﭨﺮﺍﺋﯽ ﮔﻠﯿﺴﺮﺍﺋﯿﮉﺯ ‏( Triglycerides ‏)
ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﮯ ﺫﺭﺍﺕ ﺑﺬﺍﺕ ﺧﻮﺩﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮔﺮﺩﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﭘﺮﻭﭨﯿﻦ ﮐﮯ ﺳﮩﺎﺭﮮ ﭼﻠﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﭘﺮﻭﭨﯿﻦ ﮐﻮ Lipoprotein ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ Lipoprotein ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﺍﯾﮏ ﮔﺎﮌﯼ ﮐﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺳﮍﮎ ﭘﺮ ﭼﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﻟﺪﺍ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻗﺴﺎﻡ ﮐﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺧﻮﻥ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﯾﭻ ﮈﯼ ﺍﯾﻞ ‏( HDL ‏) ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ
ﺍﺱ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﻮ “ ﺍﭼﮭﺎ ” ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﻮ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﭩﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﮕﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﺟﮕﺮ ﺍﯾﮏ ﻓﯿﮑﭩﺮﯼ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮨﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﮩﻨﭻ ﮐﺮ ﺑﮭﺴﻢ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻣﻘﺮﺭﮦ ﺣﺪ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺪﺩ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﯾﻞ ﮈﯼ ﺍﯾﻞ ‏( LDL ‏) ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ
ﯾﮧ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ “ ﺑﺮﺍ ” ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﯾﮩﯽ ﻭﮦ ﻗﺴﻢ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﻧﺪﺭﻭﻧﯽ ﺗﮩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻢ ﮐﺮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻣﻮﭨﺎ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﻻﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺩ ﻝ ﮐﯽ ﺷﺮﯾﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﭨﺮﺍﺋﯽ ﮔﻠﯿﺴﺮﺍﺋﯿﮉﺯ ‏( Triglycerides ‏)
ﯾﮧ ﻭﮦ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺫﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮐﻠﻮ ﺭﯾﺰ ﺑﮩﻢ ﭘﮩﻨﭽﺎﺋﯽ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﺍﺿﺎﻓﯽ ﺗﻮﺍﻧﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ‏( ﻣﺜﻼً ﻭﺭﺯﺵ ، ﺑﮭﺎﺭ ﯼ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﮐﺎﻡ ﻭﻏﯿﺮﮦ ‏) ﭨﺮﺍﺋﯽ ﮔﻠﯿﺴﺮﺍﺋﯿﮉ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﮍﺗﯽ ﮨﮯ ۔ ﺗﺎﮨﻢ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺩﺗﯽ ﻟﮕﺎﺗﺎﺭ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺩ ﻝ ﮐﮯ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺫﯾﺎﺑﯿﻄﺲ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﮪ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺮﺭﮦ ﺣﺪ ﺍﻭﺭ ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟
* ﭨﻮﭨﻞ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻧﺎﺭﻣﻞ ﯾﺎ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺩﺭﺟﮧ ﺑﻨﺪﯼ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ 180 ﻣﻠﯽ ﮔﺮﺍ ﻡ ﯾﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﻢ ﮨﮯ۔
* ﺑﺎﺭﮈﺭ ﻻﺋﻦ ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ 181 ﺳﮯ 199 ﻣﻠﯽ ﮔﺮﺍ ﻡ ﮨﮯ۔
* ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ 200 ﻣﻠﯽ ﮔﺮﺍﻡ ﯾﺎ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﮯ۔
ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﮯ ﺑﮍﮬﻨﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﻮﮨﺎﺕ ﮐﯿﺎ ﮨﯿﮟ؟
* ﻣﻮﺭﻭﺛﯽ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﺑﮩﺖ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﮐﮯ ﺣﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ ۔ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﭽﮫ ﺧﺎﻧﺪﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﻣﻮﺭﻭﺛﯽ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﺑﭽﻮﮞ ﺍﻭﺭﻧﻮﺟﻮﺍﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺩﺗﯽ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔
* ﻏﺬﺍ ﻣﯿﮟ ﭼﮑﻨﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﮐﯽ ﺯﯾﺎﺩﺗﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﻮ ﺑﮍﮬﺎ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺯﺭﺩﯼ ﻭﺍﻻ ﺍﻧﮉﮦ ، ﻣﺮﻏﻦ ﻏﺬﺍﺋﯿﮟ ، ﺗﻠﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﺷﯿﺎﺀ ، ﻧﺎﺭﯾﻞ ، ﻣﻐﺰ ، ﮔﺮﺩﮦ ، ﮐﻠﯿﺠﯽ ، ﻧﮩﺎﺭﯼ ، ﭘﺎﺋﮯ ، ﮔﺎﺋﮯ ﮐﺎ ﮔﻮﺷﺖ ﭼﻨﺪ ﺍﯾﮏ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﺎ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺍﻭﺭ ﮐﺜﺮﺕ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﮐﻮ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮍ ﮬﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ۔ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻥ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﯽ ﻓﯿﻤﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺑﮍﮬﻨﮯ ﮐﺎ ﺭﺟﺤﺎﻥ ﮨﮯ۔ ﺍﻟﮑﻮﺣﻞ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺑﮍﮬﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
* ﮐﭽﮫ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﺑﮍﮬﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺜﻼً ﺗﮭﺎﺋﯽ ﺭﺍﺋﯿﮉ thyroid ﮐﺎ ﻣﺮﺽ ، ﮔﺮﺩﻭﮞ ﮐﺎﻣﺮﺽ ، ﺷﻮﮔﺮ ﮐﺎ ﻣﺮﺽ ﻭﻏﯿﺮﮦ۔
* ﻣﻮﭨﺎﭘﺎ ، ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﻮ ﺑﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺍﮨﻢ ﻋﻨﺼﺮ ﮨﮯ۔
* ﻭﺭﺯﺵ ﮐﯽ ﮐﻤﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﻧﻮﺷﯽ۔
ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﮐﯿﺎ ﻋﻼﻣﺎﺕ ﮨﯿﮟ؟
ﻋﻤﻮﻣﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﻼﻣﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭘﺘﮧ ﺻﺮﻑ ﺧﻮﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭨﯿﺴﭧ ﮐﺮﻭﺍ ﮐﺮ ﮨﯽ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺗﺎﮨﻢ ﮐﭽﮫ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﺮﺩ ، ﺟﻠﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﮌﻭﮞ ﭘﺮ ﭘﯿﻠﮯ ﭘﯿﻠﮯ ﻧﺸﺎﻧﺎﺕ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﭘﺮ ﻣﺤﯿﻂ ﻋﺮﺻﮯ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﻧﺪﺭﻭﻧﯽ ﺗﮩﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﻟﯿﺎﮞ ﺗﻨﮓ ﺍﻭﺭ ﺳﺨﺖ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ۔ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﮐﯽ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﮐﻮ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﭘﮩﻨﭽﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻟﯿﺴﭩﺮﻭﻝ ﺟﻤﻨﮯ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻣﻨﻔﯽ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﻧﺎﻟﯿﺎﮞ ﺗﻨﮓ ﺍﻭﺭﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﮐﻢ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﭘﺮ ﻣﻨﺪﺭﺟﮧ ﺫﯾﻞ ﻣﻨﻔﯽ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﻣﺮﺗﺐ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ : ﭨﺎﻧﮕﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺮﯾﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻨﮕﯽ ﺁﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﭨﺎﻧﮕﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺪﯾﺪ ﺩﺭﺩ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﭼﻠﻨﮯ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺧﻮﻥ ﺟﻢ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﭨﺎﻧﮓ ﻧﺎﮐﺎﺭﮦ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﭨﺎﻧﮓ ﮐﺎﭨﻨﯽ ﭘﮍﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﺩﻣﺎﻍ
ﺩﻣﺎﻍ ﮐﯽ ﺭﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﻥ ﺟﻢ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﯾﺎ ﻧﺎﻟﯿﺎﮞ ﭘﮭﭩﻨﮯ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﺑﮩﮧ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﻓﺎﻟﺞ ﮐﺎ ﺍﺛﺮ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻓﺎﻟﺞ ﺍﯾﮏ ﺟﺎﻥ ﻟﯿﻮﺍ ﻣﺮﺽ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺧﻮﻥ ﺟﻤﻨﮯ ﮐﺎ ﻋﻤﻞ ، ﺩﻝ ﺳﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻧﺎﻟﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﯾﺎ ﺗﻮ ﻓﺎﻟﺞ ﯾﺎ ﻭﻗﺘﯽ ﺑﯿﮩﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﻋﻼﻣﺎﺕ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔
ﺩﻝ
ﺩﻝ ﮐﯽ ﺷﺮﯾﺎﻧﯿﮟ ﺗﻨﮓ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ
* ﺩﻝ ﮐﺎﺩﺭﺩ ‏( Angina ‏)
* ﺩ ﻝ ﮐﺎ ﺩﻭﺭﮦ ‏( Heart Attack ‏)
* ﮨﺎﺭﭦ ﻓﯿﻠﯿﺮ ‏( Heart failure ‏)
ﺟﯿﺴﮯ ﻣﻮﺫﯼ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺷﺮﯾﺎﻧﯿﻦ
ﺩﻝ ، ﺩﻣﺎﻍ ﺍﻭﺭ ﭨﺎﻧﮕﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺮﯾﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﺎﻗﯽ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﻣﺜﻼً ﮔﺮﺩﮮ ، ﺁﻧﺘﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩ ﻝ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺑﮍﯼ ﺷﺮﯾﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻭﮨﯽ ﻋﻤﻞ ﯾﻌﻨﯽ ﺗﻨﮕﯽ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﻥ ﮐﮯ ﺑﮩﺎﺅ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﯽ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻥ ﺍﻋﻀﺎﺀ ﮐﻮ ﻧﻘﺼﺎ ﻥ ﭘﮩﻨﭽﺘﺎ ﮨﮯ۔

حکیم ڈاکٹر ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت
ڈی ایچ ایم ایس
0301 74 53 919
0322 97 93 919

https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=2032296023596950&id=475249789301589Like and share plz
11/10/2022

https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=2032296023596950&id=475249789301589
Like and share plz

بانجھ پن
اولاد اللّٰہ کریم کا عطا کردا ایک خوبصورت ترین تحفہ ہے جس کے نا ہونے سے انسان خود کو نامکمل سمجھتا ہے ایک ننا منا سا بچہ والدین کو وہ خوشی دتیا ہے جسے وہ شمار بھی نہیں کر سکتے شادی کا مقصد ہے اگر یہ مقصد پورا نہ ہوسکے تو شادی ادھوری تصور کی جاتی ہے
اولاد کا نا ہونا کبھی کبھی انسان کو مایوسی کی طرف لے جاتا ہے اکثر شادی شدہ جوڑے غلط تشخیص اور غلط دوائیاں استعمال کے بعد خود کو بانجھ پن کا شکار کر لیتے ہیں
اللّٰہ کریم نے انسان کی بقاء اس کائنات میں بہت سے نظامات بنائے ہیں ان میں سے ایک جنسی نظام ہے اس نظام میں خرابی بانجھ پن کہلاتا ہے

ماہریِن طب نے بانجھ پن کی مختلف تعریفیں کی ہیں ماہرین کا کہنا ہے کہ "کوئی شادی شدہ جوڑا ایک سال تک کا عرصہ ایک ساتھ رہے اور وظیفہ ازدواجیت بھی مسلسل ادا کرتے رہیں اور اولاد پیدا نہ کر سکیں تو ایسا جوڑا بانجھ کہلاتا ہے "

بانجھ پن کی دو اقسام ہیں
مردانہ بانجھ پن
زنانہ بانجھ پن

1: مردانہ بانجھ پن

اگر کوئی مرد وظیفہ ازدواجیت ادا کرنے کے باوجود اولاد پیدا کرنے میں کامیاب نا ہو تو اس مرد کو بانجھ تصور کیا جاتا ہے اور اس کا علاج ممکن ہے بہت سے لوگ بانجھ لفظ کو ایک گالی کی طرح سمجھتے ہیں جب کہ یہ قبلِ علاج مرض ہے بس درست تشخیص اور درست علاج کی ضرورت ہے اس کی بہت سی وجوہات ہیں جن میں سے چند درجہ ذیل ہیں

سیمن انفیکشن
سرعت انزال
دائمی سوزاک
پرانا ٹائفید
ہپیٹاٹیس بی, سی
ایزوسپرمیا
لیگو سپرمیا
نفسیاتی امراض
ویرکوری سیل
اور دیگر کئی اسباب علامات ہیں

2 : زنانہ بانجھ پن

جس عورت کے ہاں بچہ نہ ہو معاشرہ اسے بانجھ سمجھتا ہے بلکہ کچھ لوگ تو اس خاتون کو منحس سمجھتے ہیں جب کہ بانجھ پن بھی دیگر بیماریوں کی طرح بیماری ہے اور اس کے بے شمار علاج ہیں علاج سے پہلے بانجھ پن کے اسباب کو جاننے کی ضرورت ہے

زنانہ بانجھ پن کےاسباب

سوزش و ورم الرحم
دائمی لیکوریا
ماہواری کے مسائل
ٹیوب کی بلاکیج
انڈوں کا نا بننا یا کمزوری
رحم کی کمزوری
ڈیپرشن
اٹھرا
سسٹ /فائبر اڈز
اور دیگر کئی اسباب و وجوہات ہیں

" درست تشخیص اور خالص جڑی بوٹیوں سے علاج ہی صحت اور شفاء کا اصل سبب ہے "

مزید معلومات اور فری چیک اب کے لئے ان نمبرز پر رابطہ کریں 03229793919 / 03017453919

کل انشاءاللّٰہ
24/08/2022

کل انشاءاللّٰہ

جگر ( Liver)      جگر اعضاء رئیسہ میں سے ایک نہایت اہم عضو ہے اس کی خرابی بدن انسانی مشکلات کا باعث بنتی ہے جگر سب بڑا غ...
12/05/2022

جگر ( Liver)
جگر اعضاء رئیسہ میں سے ایک نہایت اہم عضو ہے اس کی خرابی بدن انسانی مشکلات کا باعث بنتی ہے جگر سب بڑا غدود ہے جسم کے تمام غدود اسی کے ماتحت کام کرتے ہیں جگر نظام انہظام میں بہت اہم کردار ادا کرتا ہے جسم میں فاسد مادوں کو خارج کرتا ہے بعض لوگوں کا خیال ہے کہ جگر خون بنتا ہے جو کہ غلط ہے ہاں خون کی پیدائش میں اہم کردار ادا ضرور کرتا ہے
بچوں میں دیگر امراض کی طرح سوکڑا پن بھی دیکھنے آیا ہے جس کی وجہ سے بچوں میں بڑھوتری نہیں ہو پاتی بچے کمزور سست اور ناتواں نظر آتے ہیں خون کی کمی کے ساتھ نمکیات کی کمی بچوں میں گروتھ نہیں ہونے دیتی بچوں میں سوکڑا پن زیادہ تر جگر کے افعال میں خرابی کے باعث ہوتا ہے اس کی دیگر کئی وجوہات ہیں عموی طور پر ایک نسخہ استعمال کیا جاتا ہے جو حاضر خدمت ہے
آصف دواخانہ ملکوال
ایڈریس : تانگہ چوک ملکوال روڈ ملکوال تلہ گنگ (چکوال)

مزید معلومات کیلئے ان نمبرز پر رابطہ کرسکتے ہیں
03017453919 / 03229793919

09/05/2022

نا امیدی نیست بے اولاد افراد متوجہ ہوں

دنیائے طب کے مایہ ناز طبیب حکیم ڈاکٹر ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت, ڈی ایچ ایم ایس , فاضل طب النبوی, اسپیشلسٹ بانجھ پن ہر جمعرات کو چکوال تشریف لاتے ہیں اور مریضوں کا معائنہ کرتے ہیں

رپورٹس اپنے ساتھ لائیں اور پریشانی سے بچانے کے لئے آنے سے پہلے نمبر لے لیں 03229793919 /03017453919
اوقات کار
صبح 9 بجے سے شام 5 بجے تک
ایڈریس : نیلہ روڈ اوڈھروال چوک چکوال

اسلام وعلیکم ورحمتہ اللّٰہ    سب دوستو کو دلی عید مبارک ہو
03/05/2022

اسلام وعلیکم ورحمتہ اللّٰہ
سب دوستو کو دلی عید مبارک ہو

20/04/2022
اسلام وعلیکم ورحمتہ اللّٰہسب دوستو کو نئے سال کی بہت مبارک ہو . اللّٰہ کریم سے دعا ہے امت مسلمہ کی خیر فرمائے اس سال کی ...
01/01/2022

اسلام وعلیکم ورحمتہ اللّٰہ
سب دوستو کو نئے سال کی بہت مبارک ہو .
اللّٰہ کریم سے دعا ہے امت مسلمہ کی خیر فرمائے اس سال کی رحمتیں برکتیں اور خوشیاں عطاء فرمائے

جوڑوں کے درد        موجودہ دور میں جوڑوں کے درد ایک لاعلاج مرض بن چکا ہے مریض دوائیں استعمال کر کر تنگ آچکے ہیں جب تک گو...
25/12/2021

جوڑوں کے درد
موجودہ دور میں جوڑوں کے درد ایک لاعلاج مرض بن چکا ہے مریض دوائیں استعمال کر کر تنگ آچکے ہیں جب تک گولیاں کھاتے رہتے ہیں سکون رہتا ہے مگر جیسے ہی گولیاں بند کیں درد دوبارہ مزید شدت اختیار کر جاتے ہیں. اس کی بہت سی وجوہات ہیں ان میں سے بڑی وجہ غلط تشخیص اور بے جا پین کلرز کا استعمال ہے
درد ایک تکلیف کا احساس ہے اور جوڑوں میں تکلیف کے احساس کو جوڑوں کے درد کہتے ہیں .جوڑوں کی جھلی میں سوزش سے یا اخلاط کے افراط و تفیرط کی وجہ سے درد کا احساس پیدا ہو جاتا ہے ویسے تو جوڑوں کے درد کے بہت اسباب ہیں چند نکات پر بحث کرنے کی کوشش کرتے ہیں
قدرت نے انسانی جسم میں ہڈیوں کو ایک خاص نظام کے تحت جوڑا رکھا ہے جوڑ انسانی حسن کے ساتھ ساتھ انسانی نقل و حرکت میں اہم کردار ادا کرتے ہیں طبی اصطلاح میں جوڑوں کو دو حصوں میں تقسیم کیا جاتا ہے وجع المفاصل یعنی بڑے جوڑ ( کلائی, بازو, کندھے کولہے , گھٹنوں, ٹخنوں کے جوڑ) اور وجع النقرس یعنی چھوٹے جوڑ (انگلیوں کے جوڑ اور کھوپڑی کے جوڑ) کہلاتے ہیں

جوڑوں کے درد کی وجوہات :
یورک ایسڈ کا بڑھ جانا
جوڑوں میں پس پیدا ہونا
ریح غلیظ کا بڑھ جانا
پرانا سوزاک زندہ ہوجانا
رطوبت کی کمی کے باعث
پٹھوں میں کھنچاؤ
جوڑوں میں سوزش
جوڑوں میں گیپ آنا
پرانا ٹائفیڈ بخار
علاج :
علاج معالجہ میں صحیح تشخیص بہت اہمیت کی حامل ہوتی ہے بغیر تشخیص کے اچھی سے اچھی دوا کے بھی نتائج نہیں ملتے چونکہ جوڑوں کے دردوں کی بہت سی وجوہات ہیں ہر وجہ کا علیحدہ علیحدہ علاج ہے بہتر یہ ہے کہ اپنا علاج خود نا کیا جائے بلکہ اچھے معالج سے مشورہ کر کے دوا استعمال کی جائے
ھوالشافی
سورنجان شیریں10 گرام
اسگند ناگوری 10گرام
کالی مرچ 10 گرام
سونٹھ 20 گرام
نوشادر 40 گرام
تمام ادویات کوٹ چھان کر اچھی طرح سفوف بنا لیں 500mg کیپسول کھانے کے بعد دودھ کے ساتھ صبح دوپہر رات استعمال کریں

احتیاطی تدابیر :
جوڑوں کے درد کا احساس ہوتے ہی کسی مستند معالج سے رابطہ کریں
چاول , چنے, چٹ پٹی اشیاء , پراٹھا سامان بیکری فاسٹ فوڈز سے پرہیز کریں
تحقیق و تحریر
ڈاکٹر حکیم ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت
ڈی ایچ ایم ایس
گھر بیٹھے دوا منگوانے کے لئے اس نمبر پر رابطہ کریں .
03229793919/03017453919

حکیم ڈاکٹر ذیشان حیدر فاضل طب الجراحت ڈی ایچ ایم ایس رابطہ 03229793919,0301745391جمعہ المبارک مکمل چھٹی
19/12/2021

حکیم ڈاکٹر ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت
ڈی ایچ ایم ایس
رابطہ 03229793919,0301745391
جمعہ المبارک مکمل چھٹی

Copied....فالج سے مراد ایسی بیماری ہے جس میں انسان کے جسم کا کوئی عضو یا حصہ بے حس اور سُن ہو جائے۔ ویسے تو فالج جسم کے ...
03/11/2021

Copied....
فالج سے مراد
ایسی بیماری ہے جس میں
انسان کے جسم کا کوئی عضو یا حصہ بے حس اور سُن ہو جائے۔ ویسے تو فالج جسم کے کسی بھی چھوٹے سے چھوٹے حصے میں ہو سکتا ہے لیکں عموماً یہ بازو، ٹانگ اور زبان کو متاثر کرتا ہے۔


فالج کے مختلف درجات ہوتے ہیں۔ چھوٹی قسم کا فالج عارضی بھی ہو سکتا ہے اور چند لمحوں میں ٹھیک ہو جاتا ہے۔ اگر فالج کا حملہ چند منٹوں میں ٹھیک نہ ہو تو اس کے ثمرات طویل عرصے تک رہ سکتے ہیں۔

ترقی یافتہ ممالک میں سب سے زیادہ اموات دل کی بیماریوں پھر کینسر اور پھر فالج سے ہوتی ہیں۔ اس سلسلہ میں قابل تشویش بات یہ ہے کہ پہلے 70 سال سے زیادہ عمر کے لوگ فالج سے متاثر ہوتے تھے لیکن آج بیس سے تیس سال کی عمر کے افراد پر بھی فالج کا حملہ ہو رہا ہے۔

کچھ بیماریاں اور انسانی عادات اور خاصیتیں ایسی ہیں جن کی موجودگی میں فالج کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔ ایسے افراد جن کا وزن زیادہ ہو۔ وہ جسمانی مشقت یا ورزش نہ کرتے ہوں، سیگریٹ، تمباکونوشی کرتے ہوئے نمک مرچ زیادہ استعمال کریں، تیز اور غصیلے مزاج کے حامل ہوں تو ایسے لوگوں کو فالج کے حملے کا خطرہ زیادہ ہو سکتا ہے۔

اس طرح سردیوں کے موسم میں خون کی شریانوں میں بندش کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔ گرمیوں کے موسم میں بھی اگر انسانی جسم میں پانی کی کمی واقع ہو جائے تو پانی کی کمی سے خون گاڑھا ہو جاتا ہے اور فالج کا امکان زیادہ ہو جاتا ہے۔ جن لوگوں کو شوگر ، بلڈپریشر، دل کی بیماری یا کولیسٹرول زیادہ ہو، ان کی وقت کے ساتھ ساتھ خون کی نالیاں سخت ہو جاتی ہیں اور ان کے پھٹ جانے یا بند ہو جانے سے بھی فالج کا حملہ ہو سکتا ہے۔

فالج کی بیماری دماغ یا گردن کی شریانوں کے متاثر ہونے سے ہوتی ہے یا تو دماغ کوخون فراہم کرنے والی نالی میں لوتھڑا بننے کے بعد دماغ کی شریان تک پہنچ کر اسے بند کر دیتا ہے۔

تیسری قسم کے فالج میں دماغ کے اندر خون کی نالی پھٹ جاتی ہے ۔ دماغ کا وہ حصہ جس میں فالج ہو، ایک ملی میٹر سے چھوٹا بھی ہو سکتا ہے اور کئی سینٹی میٹر سے بڑا بھی ہو سکتا ہے۔ اس طرح ممکن ہے کہ پوری طرح مریض ہوش میں ہو یا بالکل بے ہوش ہو، بعض حالات میں چند گھنٹوں کے اندر مریض کی جان بھی ضائع ہو سکتی ہے۔

امریکہ میں ہر چالیس سکینڈ پر کوئی ایک شخص فالج کے حملے کا شکار ہوتا ہے اور مفلوج ہونے والا ہر چوتھا مریض 65 سال سے کم عمر کا نکلتا ہے۔ اسی طرح ہر 15واں مریض ابھی عمر کی 45 ویں بہار بھی نہیں دیکھ پاتا کہ اسے فالج کے باعث موت یا معذوری میں سے کسی ایک کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ افسوس ناک بات یہ ہے کہ فالج کا شکار ہونے والے بیشتر افراد کو آخر تک معلوم ہی نہیں ہوتا کہ خرابی کب اور کہاں پیدا ہوئی تھی۔

ہو سکتا ہے کہ طویل عرصے سے جاری صحت کی اندرونی خرابیاں اس کی وجہ ہوں لیکن نوجوانوں کے دماغوں میں دھماکہ خیز صورتحال فالج کی فوری تحریک کا سسب قرار دی جا سکتی ہے۔ منفی جذبات اور غلط سوج جو آپ کے دماغ میں ہوتی ہیں وہ اسی طرح ہلاکت خیز ثابت ہو سکتی ہیں، جس طرح دوران خون میں شامل ہو کی جمی ہوئی پھٹکی جان لیوا ہو سکتی ہے۔

فالج کا تعلق دماغ کی مختلف بیماریوں سے ہے۔ دراصل دماغ ہی ہے جو انسانی جسم کی حرکات کو کنٹرول کرتا ہے۔کوئی بھی بیماری جو دماغ پر اثر انداز ہوتی ہے، فالج کر سکتی ہے۔ اس میں دماغ کی شریان بند ہو جانا یا پھٹ جانا سب سے عام وجوہات ہیں۔

دماغ آکسیجن کی کمی کو بہت تھوڑی دیر کے لئے برداشت کر سکتا ہے۔ خون کی نالیاں پھیپھڑوں سے آکسیجن جذب کرکے ایک یا دو سکینڈ میں دماغ کو پہنچا دیتی ہیں۔ اگر یہ رسد ایک یا دو منٹ کے لئے بھی بند ہو جائے تو دماغ کو شدید ناقابل تلافی نقصان پہنچ سکتا ہے۔ بعض اوقات آپ کا پاؤں یا ہاتھ نہیں ہل رہاہوتا اور پھر تھوڑی دیر کے بعد ٹھیک ہوجاتا ہے۔ یہ فالج کی ابتدائی علامت ہے

فالج یا اسٹروک دو طرح کے ہوتے ہیں جن میں ایک چھوٹا منی اسٹروک ہوتا ہے اور ایک بڑا فل اسٹروک ہوتاہے چھوٹے اسٹروک میں مریض کمزوری محسوس کرتا ہے،اس کا منہ ٹیڑھا ہوجاتا ہے اس کو بولنے میں دقت ہوتی ہے اس کے مریض جلد ٹھیک ہوجاتے ہیں

اگر مکمل علاج نہ کروایا جایے تو پھر فل اسٹروک ہونے کا امکان زیادہ ہوجاتا ہے۔ اس میں انسان کا منہ مکمل طور پر ٹیڑھا ہو جاتا ہے جسم کا ایک حصہ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے،بینائی کم ہوجاتی ہےقوت گویائی ختم ہوجاتی ہے، اس پر فوری علاج کی ضرورت پیش آتی ہے ذرا سی سستی مریض کی جان لے سکتی ہے۔

ایسے افراد جن کا ہاتھ یا پاؤں یا زبان تھوڑی دیر کے لئے کام کرنا چھوڑ دے انہیں فوری طور پر ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہئے۔ سی ٹی سکین کروانے کے بعد انہیں خون پتلا کرنے والی ادویات دی جاتی ہیں۔ اس کے بعد وجہ معلوم کی جاتی ہے۔ عام طور پر وجہ دل میں گلے کی نالیوں یا دماغ کی خون کی شریانوں میں ہوتی ہے۔خون پتلا کرنے والی ادویات بقیہ عمر کھانی پڑتی ہیں کیونکہ اگر ایک دفعہ خون گھاڑا ہو یا خون میں کلاٹ بنیں تو دوبارہ فالج بننے کا خطرہ ساری عمر رہتا ہے۔

فالج کی وجہ خون بند ہو جانا ہی نہیں دماغ میں شریان پھٹ جانا بھی ہے۔ اس صورت میں سر میں بہت سخت درد ہوتا ہے۔ مریض بے ہوش ہو جاتا ہے اور اسی دوران موت بھی واقع ہو سکتی ہے۔ شریان پھٹنے کے بعد فالج بہت جلد ہو جاتا ہے۔ جب کہ شریان بند ہونے کے چند گھنٹے بعد ہی فالج ظاہر ہوتا ہے۔

سی ٹی سکین کروانا اس لئے بھی ضروری ہے کہ پتا چلے کہ دماغ کی شریان پھٹی ہے یا بند ہوئی ہے۔ اگر تو شریان بند ہو تو خون پتلا کرنے والی ادویات انتہائی ضروری ہیں اور اگر شریان پھٹ گئی ہے تو خون پتلا کرنے والی ادویات جان لیوا ثابت ہو سکتی ہیں۔

فالج کی وجوہات

ذہنی دباؤ

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر آپ اپنے اسٹریس کو کنٹرول نہیں کریں گے تو اس کے نتیجے میں بلڈ پریشر بڑھے گااور خون زیادہ گاڑھا اور چپکنے والا ہو جائے گا اور ایسی صورت میں دماغ کے مختلف حصوں میں خون لے جانے والی نالیوں میں کوئی بھی پھٹکی جم کر خون کا راستہ روک سکتی ہے، جس کا نتیجہ فالج کی صورت میں سامنے آ سکتا ہے۔
جارحیت

بڑھاپے پر تحقیق کرنے والے امریکہ کے قومی ادارے کے ایک حالیہ جائزے میں بتایا گیا ہے کہ وہ افراد جو مخالفانہ اور معاندانہ رویہ رکھتے ہیں، خاص طور پر وہ جو سازشی یا جوڑ توڑ کے ماہر ہوتے ہیں اور جن میں جاریت پسندی نمایاں ہوتی ہے ان کی Carotid Arteriesوہ دو شریانیں ہیں جو سر اور گردن کی طرف خون لے جاتی ہیں۔

اگرچہ اس خرابی کو پیدا ہونے میں کئی سال لگ جاتے ہیں لیکن وہ نوجوان جو زیادہ جھگڑلو یا جاریت پسند ہوتے ہیں، ان میں بھی یہ شریانیں ضرورت سے زیادہ موٹی اور اندر سے تنگ ہو جائیں تو دماغ تک کا بہاؤ گھٹ سکتا ہے اور دماغ اکسیجن سے محروم ہو سکتا ہے ، اس کے نتیجے میں دماغی خلیے مر سکتے ہیں اور یہی فالج ہے۔

تنہائی

اس بات میں کوئی مبالغہ نہیں ، نہ ہی یہ کوئی شاعرانہ بات ہے کہ تنہائی سے دل کو صدمہ پہنچتا ہےشکاگو یونیورسٹی میں تنہا رہنے والے بالغ افراد پر چار سال تک جاری رہنے والے ایک طبی جائزے میں یہ دیکھا جا چکا ہے کہ جو لوگ سب سے زیادہ تنہائی کا شکارتھے، ان کا Systolic بلڈ پریشر سالانہ3.6 ملی میٹر کی شرح سے بڑھ رہا تھا۔

ان نوجوانوں کے باڈی ماس انڈیکس، سگریٹ نوشی اور ورزش کی عادات کو مدنظر رکھنے کے باوجود اس نتیجے پر کوئی اثر نہیں پڑا تھا۔ اس کی واحد ممکنہ وجہ یہ قرار دی گئی کہ تنہائی پسندی سے خون میں اسٹریس ہارمون "کورٹیزول” کی سطح بڑھ جاتی ہے جس سے بلڈ پریشر بھی بڑھ جاتا ہے اور ساتھ میں فالج بھی

ازدواجی بے اطمینانی

جو لوگ مجرد یا تنہا زندگی گزارنا پسند کرتے ہیں، صرف وہی فالج کی زد میں نہیں آتے بلکہ ایسے شادی شدہ افراد جو نام کے شادی شدہ ہوتے ہیں اور عملاً ان کی زندگی تنہائیوں کا شکار ہوتی ہے وہ بھی اسٹروک کا شکار ہو سکتے ہیں۔

2010 میں امریکن اسٹروک ایسوسی ایشن کے ایک جائزے میں انکشاف کیا گیا تھا کہ ایسے مرد حضرات جن کی ازدواجی زندگی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے ، ان پر خوشگوار ازدواجی زندگی گزارنے والوں کے مقابلے میں فالج کے مہلک حملے کا خطرہ 64 فیصد تک زیادہ دیکھا گیا ہے۔

ماہرین کے بقول اگر آپ اپنی شادی شدہ زندگی زندگی سے ناآسودہ ہیں تو ممکن ہےآپ معاشرہ سے کٹا ہوا محسوس نہ کریں لیکن آپ خود کو تنہا محسوس کر سکتے ہیں اور جس کا خمیازہ اس طرح بھگت سکتے ہیں جس طرح تنہائی کے شکار افراد جھیلتے ہیں۔

فالج کی علامات

جسم کے اعضاء کا سن ہو جانا

اگر آپ کے ہاتھ یا پیر سن یا بے حس ہورہے ہو تو آسانی سے تصور کیا جاسکتا ہے کہ یہ اعصاب دب جانے کا نتیجہ ہے۔ تاہم طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر آپ کا ہاتھ اچانک بے حس یا کمزور ہوجائے تو یہ کیفیت چند منٹوں میں دور نہ ہو تو فوری طبی امداد کے لیے رابطہ کیا جانا چاہئے۔ ان کے بقول شریانوں میں ریڑھ کی ہڈی سے دماغ تک خون کی روانی میں کمی کے نتیجے میں جسم کا ایک حس سن یا کمزور ہو جاتا ہے۔

نظر سے متعلقہ مسائل

فالج میں بنیائی کے مسائل جیسے کوئی ایک چیز دو نظر آنا، دھندلا پن یا کسی ایک آنکھ کی بنیائی سے محرومی فالج کی علامات ہوسکتے ہیں مگر بیشتر افراد ان علامات کو بڑھاپے یا تھکاوٹ کا نتیجہ سمجھ لیتے ہیں۔

طبی ماہرین کے مطابق تھکاوٹ یا بہت زیادہ مطالعے ایک چیز دو نظر آنا بالکل ممکن نہیں، درحقیقت خون کی ایک بلاک شریان آنکھوں کو درکار آکسیجن کی مقدار کو کم کردیتی ہے جس کے نتیجے میں بنیائی کے مسائل کا باعث بنتے ہیں اور اس دوران فالج کی دیگر علامات بھی ظاہر نہیں ہوتیں۔

بولنے میں مشکلات

فالج کے دوران بولنے میں ہکلاہٹ یا مشکلات ہوتی ہے۔ اور لوگ سوچتے ہیں یہ ان کی دوا کا اثر ہے مگر یہ فالج کی علامت بھی ہوسکتا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق اگر اس سے پہلے یہی دوا استعمال کرنے پر آپ کو کسی قسم کے سائیڈ ایفیکٹ کا سامنا نہ ہوا تو پھر یہ فالج کی ایک علامت ہوسکتا ہے۔

او رآپ کو فوری طور پر طبی امداد کے لیے رابطہ کرنا چاہئے۔ اگر بولنے میں دِقّت محسوس ہو تو فوری طور پر منہ کی ورزش کریں اور ہونٹوں کے قریب تیل سے مساج کریں اور اس کے علاوہ متوازن غذا کا استعمال کریں

سوچ میں مشکلات

اگر سوچنے میں دِقّت پیش آئے اور اکثر دماغ سے بات نکل جائے اور کچھ یاد نہ رہے تو فوراً اس کا نوٹس لیں کیونکہ یہ بھی فالج کی ابتدائی علامت ہو سکتی ہے۔بعض دفعہ لوگوں کو درست الفاظ کے انتخاب یا کسی چیز کے بارے میں پوری توجہ سے سوچنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے تو اکثر وہ اسے تھکن کا نتیجہ قرار دیتے ہیں۔ مگر اچانک دماغی صلاحیتوں میں کمی فالج کی عام علامت میں سے ایک ہے۔

طبی ماہرین کے مطابق ایک لمحے کے لیے تو سوچنے میں مشکل کا سامنا کسی بھی فرد کو ہوسکتا ہے مگر اس کا دورانیہ اگر بڑھ جائے تو یہ باعث تشویش ہے۔ ان کے بقول کئی بار تو مریضوں کو یہ اندازہ ہی نہیں ہوتا کیا چیز غلط ہے کیونکہ ان کا دماغ کام نہیں کررہا ہوتا اور ان کے سوچنے کی صلاحیت متاثر ہوتی ہے۔ اس سلسلے میں پانی زیادہ سے زیادہ پئیں اور ایسے کاموں میں مصروف ہو جائیں اور ایسی گیمز کھیلیں جہاں زیادہ سوچنا پڑے

آدھے سر کا درد

طبی ماہرین بتاتے ہیں کہ آدھے سر کے درد یا مائیگرین میں فالج بھی چھپا ہوسکتا ہے لوگ سمجھتے ہیں کہ یہ محض آدھے سر کا درد ہے ۔ اگر یہ تکلیف آپ کو پہلے سے متاثر نہ کرتی رہی ہو تو یہ فالج کی علامت بھی ہوسکتا ہے۔ کیونکہ ان دونوں امراض میں دماغی علامات ایک جیسی ہی ہوتی ہیں۔ ماہرین کے بقول آدھے سر کے درد کے شکار افراد کو اس کا علاج فالج کی طرح ہی کرانا چاہئے اور ڈاکٹروں سے مدد لینی چاہئے۔

فالج سے بچاؤ کی تدابیر

فالج سے بچاؤ کے لئے احتیاطی تدابیر پر عمل کرنا ضروری ہے۔
فالج سے بچاؤ کے لیے ضروری ہے کہ روزانہ ورزش کی جائے۔ خوراک میں اعتدال رکھا جائے۔ زیادہ چکنائی اور نمک والی چیزوں سے پرہیز کیا جائے۔ ابتدائی علامات ظاہر ہونے کی صورت میں فوری طور پر معالج سے رجو ع کیا جائے۔

طب اسلامی میں بے اولادی کا علاج 1 :  دستر خوان کے اردگرد گرے ہوئے ٹکڑے چن کر کھانا معاویہ بن وھب کہتا ہے: ہم نے امام صاد...
30/10/2021

طب اسلامی میں بے اولادی کا علاج

1 : دستر خوان کے اردگرد گرے ہوئے ٹکڑے چن کر کھانا

معاویہ بن وھب کہتا ہے: ہم نے امام صادق علیہ السلام کے ساتھ کھانا کھایا ، جب دستر خوان کو لپیٹتے ہیں تو امام علیہ السلام غذا جو زمین پر گری ہوئی تھی جمع کر رہے تھے اور کھا رہے تھے. پھر امام علیہ السلام نے فرمایا: یہ کام فقر کو ختم اور اولاد کو ذیادہ کرتا ہے.
المحاسن/ ج 2/ ص 444/ ح 326 الکافی / ج 6/ ص 481/ ح 506.

2 : انڈے کھانا

پیغمبروں میں سے ایک پیغمبر نے امت میں نسل اور اولاد کی کمی کی شکایت کی. اللّہ تعالٰی نے اس پیامبر کو حکم دیا کہ امت کو انڈے کھانے کا حکم دیں. انھوں نے یہ کام کیا انکی نسل زیادہ ہوگئی.
📢 توجہ. انڈے کھانے سے مراد کھانے میں استمرار ہے. اور انڈے کو روٹی کے ساتھ کھائیں.

3 : انڈے کے ساتھ گوشت

امام صادق علیہ السلام فرماتے ہیں:
پیغمبروں میں ایک پیغمبر نے اپنی امت کی نسل اور اولاد کی کمی کی شکایت کی. اللّہ تعالٰی نے اسے حکم دیا کہ گوشت کو انڈے کے ساتھ ملا کر کھائیں.
المحاسن / ج2/ ص 481/ ح 508. الکافی/ ج6/ ص325/ ح3.

4: انڈے کے ساتھ پیاز

عمر بن ابوالحسن کہتا ہے:
امام کاظم علیہ السلام سے اولاد کی کمی شکایت کی، امام علیہ السلام نے فرمایا: استغفار کرو اور انڈے کو پیاز کے ساتھ کھاؤ.
المحاسن/ ج2/ ص 481 ح 509. الکافی/ج6 / ص 224/ ح 2.

امام کاظم علیہ السلام فرماتے ہیں:جو بھی انڈا ، پیاز اور زیتون کا تیل کھائے اسکی جنسی تونائی میں اضافہ ہو جائے گا.
مکارم الاخلاق / ج1/ ص425 / ح 1451.

📢 توجہ: مراد دیسی انڈا ہے اور زیتون کے تیل کے ساتھ آملیٹ کی شکل میں کھائیں. ( پیاز کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑے کرکے زیتون کے تیل میں سرخ کرلیں اسکے بعد اوپر انڈا ڈال دیں. سرخ کرنا:فرائی کرنا مراد ہے.)
5: کاسنی

کاسنی کھاؤ، کیونکہ اموال اور اولاد کو زیادہ کرتی ہے. پس جو چاہتا ہے اس کا مال اور اولاد زیادہ ہو پس وہ دائماً کاسنی کھائے.
المحاسن/ ج2/ ص508/ ح 662.

حکیم ڈاکٹر ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت
ڈی ایچ ایم ایس

مزید معلومات یا گھر بیٹھے دوا منگوانے کے لئے اس نمبر پر رابطہ کریں
+92 322 97 93 919

26/10/2021

حقیقت

سب دوستو کو عید کی خوشیاں بہت بہت مبارک
21/07/2021

سب دوستو کو عید کی خوشیاں بہت بہت مبارک

https://youtu.be/W9l3v5I7eDA
21/06/2021

https://youtu.be/W9l3v5I7eDA

Enjoy the videos and music you love, upload original content, and share it all with friends, family, and the world on YouTube.

اعصابی ٹانک          موجودہ دور میں انٹرنیٹ اور موبائل فون کے بجا استعمال سے جہاں بہت سے نفسیاتی مسائل پیدا ہو رہے ہیں و...
13/06/2021

اعصابی ٹانک
موجودہ دور میں انٹرنیٹ اور موبائل فون کے بجا استعمال سے جہاں بہت سے نفسیاتی مسائل پیدا ہو رہے ہیں وہاں نسیان , چڑچڑاپن, سستی , کاہلی اور تھکاوٹ اور دیگر اعصابی کمزوری کی علامات بھی تیزی سے پیدا ہو رہی ہیں ان مسائل کے پیشِ نظراور قارئین کی خدمت کی غرض سے مجرب المجرب گھریلو علاج پیش خدمت ہے

اجزاء:
بادام گیری 200 گرام
منقٰی. 200 گرام
گلقند. 100 گرام
سبز الاچی. 10 گرام
ورق نقرہ. 25 عدد
ترکیب تیاری:
بادام ثابت لیں اور خود گیری نکال کر اچھی طرح کوٹ لیں کہ. مکھن کی طرح نرم ہوجائے پھر منقٰی کے بیج نکال دیں منقٰی کو بھی کوٹ لیں اور آخر میں سبز الالچی باری شدہ اورگلقند شامل کرکےخوب اچھی طرح مکس کریں کے تمام اجزاء یکجان ہو جائیں چاندی کے اوراق آخر میں شامل کریں بس. تیار ہے ہوا بند بوتل میں محفوظ کرلیں
طریقہ استعمال:
1/2 چمچ صبح و شام دودھ کے
ساتھ بعد از غزا استعمال کریں
فوائد:
معدہ کےافعال کو منعظم کرے
دائمی قبض کو ختم کرے
دل و دماغ کو طاقت دے
جسم کے پٹھوں کو طاقت دے
خون کی کمی کو پورا کرے
حرارت غریزی میں اضافہ کرے
یادداشت میں اضافہ کرے
قوت باہ میں ضافہ کرے
سستی کاہلی کو ختم کرے
اورجسم کوچست وتوانا کرے
احتیاط و پرہیز
مرغن و گرم مصالحہ جات سے پرہیز کریں زیادہ ترش اشیاء بلکل بند کریں شوگر کے مریض اس نسخے کو استعمال نا کریں معالج کے مشورہ سے استعمال کریں

تحریر وتحقیق
خادم طب
ڈاکٹر حکیم ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت
ڈی. ایچ. ایم. ایس.

نوٹ: تیار شدہ دوا گھر بیٹھے منگوانے اور مزید معلومات کیلئے اس نمبر پر رابطہ کریں 03229793919 :Cell

بسم اللّٰہ الرّحمٰن الرّحیم       امید ہے کہ سب دوست خیریت وعافیت سے ہونگے اکثر لوگ سوال کرتے ہیں کہ وظیفہ ازدواجیت ادا ...
25/05/2021

بسم اللّٰہ الرّحمٰن الرّحیم
امید ہے کہ سب دوست خیریت وعافیت سے ہونگے اکثر لوگ سوال کرتے ہیں کہ وظیفہ ازدواجیت ادا کرنے کے بعد اگلہ سارا دن نقاہت و تھکاوٹ محسوس ہوتی ہے اور کئی نوجوان تو یہ بھی بتاتے ہیں کہ صبح بستر سے اٹھا ہی نہیں جاتا ایسے مریض رطوبت کی کمی اور حرارت کی زیادتی کے باعث کمزوری محسوس کرتے ہیں اور بہت سی میڈیسن کے استعمال کے باوجود کمزوری نہیں جاتی ان کے لئے یہ نسخہ آب حیات کی سی تاثیر رکھتا ہے

ترکیب تیاری :
ایک نلی والی ہڈی اور پودینہ 3 پتے لیں اس کو تین کلو پانی میں اتنا ابالیں کہ پاؤ رہ جائے تو اتار لیں ہڈی میں سے مکھ نکال کر اس کو خوب اچھی طرح مکس کرکے دو حصے کریں ایک حصہ صبح خالی پیٹ اور دوسرا حصہ شام عصر کے وقت کالی مرچ اور نمک ڈال کر استعمال کریں یہ نسخہ کم سے کم 7 سے 11 دن متواتر استعمال کریں اور زیادہ جتنا ضرورت ہو معالج کے مشورہ سے استعمال کرسکتے ہیں
یہ نسخہ ان مرد و خواتین کے لئے بھی ہے جن کے جوڑوں سے اٹھتے بیٹھتے آوازیں آتی ہیں اور بہت سی ادویات استعمال کر چکے ہیں جوڑوں میں درد رہتا ہے جاتا نہیں تو یہ نسخہ استعمال کرنے کے بعد ان کے دل سے انشاءاللہ تعالیٰ دعا ضرور نکلے گی

دیگر فوائد
خشک دمہ کیلئے
جوڑوں کے درد
جوڑوں سے آوازیں آنا
مادہ منویہ کی کمی
کیلشیم کی کمی کیلئے
قوت باہ میں اضافہ کرے
قوت مدافعت میں اضافہ کیلئے
اور ہرقسم کی جسمانی کمزوری
کیلئے از حد مجرب و مفید ہے

تحریر وتحقیق
ڈاکٹر حکیم ذیشان حیدر
فاضل طب الجرحت
ڈی ایچ ایم ایس
Cell +92 322 97 93 919

شوگر دنیا میں پھیلنے والی بڑی بیماری ہے یہ ایسا موزی مرض ہے جو انسان کو اندر ہی اندر سے دیمک کی طرح چاٹ جاتا ہے شوگر کو ...
10/04/2021

شوگر دنیا میں پھیلنے والی بڑی بیماری ہے یہ ایسا موزی مرض ہے جو انسان کو اندر ہی اندر سے دیمک کی طرح چاٹ جاتا ہے شوگر کو اگر خاموش قاتل کہا جائے تو غلط نہ ہوگا اس مرض میں مبتلا 25 سے 30 فیصد لوگ اس مرض بے خبر ہوتے ہیں
شوگر کی اہم علامات :
پیشاب کی زیادتی
بار بار پیاس لگنا
ہونٹ اکثر خشک رہنا
زخموں کا دیر سے بھرنا
پاؤں کا سن ہو جانا
وزن کم ہو جانا
کمزوری محسوس ہونا
چڑچڑاپن پیدا ہو جانا
زیادہ ٹینشن میں رہنا
کام کے بعد زیادہ تھکاوٹ محسوس کرنا

احتیاطی اقدامات :
اگر کوئی شخص ان علامات شکار ہو تو کسی مستند طبیب جو ماہرنفسیات بھی ہو رابطہ کرکے چیک اپ کروائیں اور روزانہ 3 سے 4 کلومیٹر واک کریں کولڈ ڈرنک اور سامان بیکری سے اجتناب کریں اور خود کو پرسکون رکھنے کی کوشش کریں
علاج:
شوگر کے علاج معالجہ کے حوالے سے مختلف نظریات پائے جاتے ہیں بعض حکماء کا خیال ہے کہ یہ ایک نفسیاتی مرض بھی ہے تو اسکا نفسیاتی علاج کیا جائے اور اس کا سب سے پہلا حملہ اعصاب پر ہوتا ہے مقوی اعصاب و مقوی عضلات اشیاء استعمال کروائی جائیں جبکہ بعض کا خیال ہے کہ شوگر خون میں شکر کی مقدار بڑھ جاتی ہے تو گردوں نظام بہتر بنانے کیلئے علاج کیا جائے شوگر کی وجوہات پر ایک طویل بحث ہے مگر مریض کو تو شفاء سے غرض ہے قارئین کی خدمت کے لئے آسان ,مجرب اور دیسی علاج پیش خدمت ہے
ھوالشافی
تخم سرس 50 گرام
خشک کریلہ 50 گرام
کلونجی 50گرام
تمبہ کا چھلکا 50گرام
گاجر بوٹی. 50 گرام
کشتہ مروارید 10 گرام
کشتہ زمرد 10 گرام
بیضہ مرغ. 10 گرام
کشتہ فولاد 10 گرام
ترکیب تیاری :
تمام ادویات کو کوٹ کر پوڈر بنا لیں اور تمام کشتہ جات آخر میں شامل کر کے خوب کھرل کریں کہ یک جان ہو جائیں صبح و شام کھانے کے بعد دودھ کے ساتھ استعمال کریں بفضل تعالیٰ شوگر میں کمی واقع ہوگی 15 دن میں کنٹرول ہو جائے گی اور مسلسل 90 دن کے استعمال سے ہمیشہ کے لئے کنٹرول رہے گی

اس کے علاوہ پنیر ڈوڈا اور گاجر بوٹی کا قہوہ بنا کر دن میں 3 بار استعمال کریں اس سے بھی بہت سے مریضوں کو فائدہ ہوا ہے

شوگر کے مریضوں کے اگر اعضاء رئیسہ کو قوت ملتی رہے تو شوگر کنٹرول رہتی ہے تو اس کے لئے" جواہر مہرہ " ہمدرد ایک گرام لے کر اس کے 14 حصے کرکے کھانے کے بعد دودھ کے ساتھ استعمال بھی موثر علاج ہے

تحریر و تحقیق
خادمِ طب ڈاکٹر و حکیم
ذیشان حیدر
فاضل طب الجراحت
ڈی ایچ ایم ایس
📱 +92 322 97 93 919

Address

Talagang
48100

Opening Hours

Monday 09:00 - 13:00
16:00 - 19:00
Tuesday 08:45 - 13:15
16:00 - 19:00
Wednesday 09:00 - 13:00
16:00 - 19:00
Thursday 09:00 - 13:00
16:00 - 19:00
Saturday 09:00 - 13:00
16:00 - 19:00
Sunday 09:00 - 13:00
16:00 - 19:00

Telephone

+923229793919

Website

Alerts

Be the first to know and let us send you an email when AsiF Dawakhana Malikwal posts news and promotions. Your email address will not be used for any other purpose, and you can unsubscribe at any time.

Contact The Business

Send a message to AsiF Dawakhana Malikwal:

Videos

Share

Category


Other Hospitals in Talagang

Show All

Comments

انسان کے جسم چار نطام کام کرتے ھین کھانا چار مرھلے سے گزرتا ھے جادبہ. ماسکہ ھاصمہ دافعہ ھاصمہ دافعہ تیز ھو جاے اورجازبہ ماسکہ کھراب ھو جا تو شوگر ھو جاتی ھے جو قوت جازبہ قوت ماسکہ تھیک کرنے سے تھیک ھو جاتی ھے جو قانون مفرد اعصا کر کے دکھاتا ھے ایے قانون مفرد اعصا پرین